پاکستان کا وہ سرکاری ادارہ جس کے ملازمین کی تنخواہوں میں 10 کی بجائے 25 فیصد اضافہ کر دیا گیا

اسلام آباد (پاکستان کی بات نیوز) سول ایوی ایشن ملازمین کیلیے زبردست خوشخبری، ملازمین کی تنخواہیں 10 کی بجائے 25 فیصد کرنے کی منظوری دے دی گئی- تفصیلات کےمطابق سول ایوی ایشن بورڈ آف ڈائریکٹرز کا اجلاس ہوا جس میں ملازمین کی تنخواہوں ‏میں اضافے کی منظوری دی گئی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ملازمین کی25 اور افسران

کی تنخواہوں میں20 فیصد اضافہ کیا جائے گا۔ ‏تنخواہوں میں اضافے کا باقاعدہ نوٹیفکیشن جلد جاری کیا جائے گا۔ بورڈ آف ڈائریکٹرز نے کراچی ایئرپورٹ پر برقی سیڑھیوں اور اےسی پلانٹ کی تبدیلی کی منظوری ‏بھی دی۔ دوسری جانب سول ایوی ایشن اتھارٹی میں مبینہ فراڈ کرکے ملازمت حاصل کرنے والوں کیخلاف ‏تحقیقات کا حکم دے دیا گیا ، جس کے بعد ملک بھر میں سی اے اے ملازمین کے خلاف ‏تحقیقات کا عمل شروع کردیا ہے۔ ڈائریکٹرایچ آرسی اےاےنےچھان بین سےمتعلق حکم نامہ جاری کردیا ہے ، جس میں جعلی ‏ڈگریوں، ڈومیسائل کے ذریعے ملازمت حاصل کرنے والے ملازمین کے خلاف گھیرا تنگ کردیا گیا۔ واضح رہے کہ وفاقی حکومت کی جانب سے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کا اعلان کیا گیا ہے جو دس فیصد ایڈہاک ریلیف کی صورت میں انہیں دیا جائے گا۔ بجٹ میں ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں بھی دس فیصد اضافے کا اعلان کیا گیا ہے۔ گزشتہ سال کورونا وائرس کے بحران اور اس کی وجہ سے معیشت میں پیدا ہونے والے منفی رجحان کے باعث حکومت نے سرکاری ملازمین کی تنخواہ اور پنشن میں کوئی اضافہ نہیں کیا تھا۔ وفاقی حکومت کی جانب سے سرکاری ملازمین کی تنخواہ اور پنشن میں اضافے کا اعلان ملک میں مہنگائی کی بلند شرح کے باعث ملازمین کو ریلیف فراہم کرے گا۔ موجودہ مالی سال میں مئی کے مہینے تک افراط زر کی شرح دس فیصد سے زیادہ ریکارڈ کی گئی ہے جس کی بنیادی وجہ کھانے پینے کی چیزوں کے ساتھ بجلی اور گیس کے نرخوں میں اضافہ ہے۔ تاہم وفاقی حکومت کی جانب سے تنخواہ اور پنشن میں اضافہ ہوا ہے جب کہ دو سال میں مہنگائی کی شرح بلند سطح پر موجود ہے۔ وفاقی بجٹ میں کم از کم اجرت بھی بڑھا دی گئی ہے جو اب 20 ہزار روپے ہو گی جو اس سے قبل 17500 روپے تھی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.