ایک گناہ جس کی سزا دنیا میں ملتی ہے

بہت سارے افراد میری مائیں ، بہنیں ، بیٹیاں ، افراد او ر بھائی وغیرہ پوچھتے ہیں۔ کہ ہمارے صدقہ وخیرات ، نوافل وفرائض ا ور واجبات قبول نہیں ہوتیں؟ پتہ نہیں ہماری دعائیں کہاں جاتی ہیں؟ پتہ نہیں ہم کتنے نوافل پڑھتے ہیں۔ فرائض ادا کرتے ہیں ۔ تہجد پڑھتے ہیں۔ ذکر واذکار اور تسبیحات پڑھتے ہیں۔ وظائف اتنے چوڑے پڑھتے

ہیں۔ پتہ نہیں چلتا۔ حالات جو ں کے توں ہیں۔ بجائے آگے بڑھنے کے پیچھے کی طرف جارہے ہیں۔ تنزلی کی طرف جارہے ہیں۔ بجائے عرو ج کی طرف جانے کے تنزلی کی طرف جار ہے ہیں۔ آج آپ کے سامنے ایک ایسا گن اہ رکھتا ہوں۔ جس گن اہ کی س زا آخر ت میں اللہ تعالیٰ ضرور دیں گے۔ لیکن ان کی س زا اللہ تعالیٰ دنیا میں مرنے سے پہلے دے دیتے ہیں۔ اور یہ بھی یا د رکھیں کہ دین اسلام اور اعضا ء کی سلامتی کے جو ہماری پیدائش ہے۔ جو ہم اشرف المخلوقات پید اہوئے ہیں۔ یہ اللہ تعالیٰ کی سب سے بڑی نعمت ہے۔ اس کے بعد تین بڑی نعمتیں ہیں۔ سب سےپہلے والدین ہیں۔ اللہ تعالیٰ کی عظیم نعمت ہے ۔ اس کی قدر کریں۔ دوسرا اولاد اور اولاد نرینہ بڑی اللہ کی نعمت ہے۔ اس کی صیحح تربیت کریں۔ تیسری ذاتی گھر اور آشیانہ اور ذاتی کاروبار بڑی اللہ تعالیٰ کی عظیم نعمت ہے۔ اس کی قدر ادا کریں اور شکر ادا کریں۔ پیارے آقا جناب محمد ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ : جتنے بھی گن اہ ہیں۔ اللہ تعالیٰ انہیں قیامت تک مہر کردیتا ہے۔ جو حساب کتاب لینا دینا ہوتا ہے۔ وہ قیامت پر موقوف ہوجاتا ہے۔ کہ قیامت والے دن بندے سے پوچھا جائے گا کہ یہ گن اہ کیوں کیا ؟ سوائے والدین کی نافرمانی کے۔ یہ اتنا بڑا گن اہ ہے۔ کہ پیارے آقا جنا ب محمد ﷺ نے

فرمایا کہ: اللہ تعالیٰ والدین کی نافرمانی کا جو گنا ہ ہے ۔ اس کی سزاجلد مرنے سے پہلے پہلے دنیا میں نازل فرمادیتے ہیں۔ اور اس س زا کی مختلف صورتیں ہیں۔ انسان کو اللہ تعالیٰ فقر وفاقہ میں مبتلا کردیتے ہیں۔ انسان کو اللہ تعالیٰ مصائب اور مشکلات میں مبتلا کردیتے ہیں۔ آپ غورو فکر کریں۔ آپ والدین کے نافرمان تو نہیں ہیں۔ پہلے تو بتایا تھا کہ تین گن اہ ایسے ہیں۔ کہ جن کے نہ فرض قبول ہیں۔ نہ نوافل قبول ہیں ۔ ا ن میں سب سے پہلے نمبر پر جو آتا ہے۔ والدین کانافرمان۔ آپ غوروفکر کریں کہ اگر آپ کےوالدین آپ سے ناراض ہیں۔ آ پ جا کر ان کی منتیں کریں ۔ ان کو راضی کریں۔ آپ ایسے ہی چل بسے ہیں۔ا ور ناراض تھے ۔ تو کثرت کے ساتھ “استغفار” فرائض، نوافل اورقرآن پاک کی تلاوت کرکے ان کو ایصال ثواب کریں۔ا نشاءاللہ! اللہ تعالیٰ آپ پر رحم فرما دیں گے۔ اللہ تعالیٰ آپ کو پکڑیں گے نہیں۔ اللہ تعالیٰ آپ سے راضی ہوجائیں گے۔ اگرآپ کےوالدین زندہ ہیں۔ تو ان کو راضی کریں۔ اگر چل بسے ہیں۔ تو زیادہ سے زیادہ ان کےلیے قرآن پاک ، نوافل ، تلاوت اور ذکر عبادت کرکے ان کو ایصال ثواب کریں۔ تاکہ آپ مشکلات ، مصائب، پریشانیوں اور تکلیفوں میں یوں الجھتے الجھتے ایسے ہی آپ کی زندگی نہ بیت جائے۔ اور ہمیشہ آپ پریشان رہیں۔ دکھ اور مصیبتوں میں رہیں گے ۔ اپنے والدین کی قدر کریں۔ اور ان کو راضی کریں۔ اگر چل بسے ہیں۔ تو پھر ذکر، تلاوت اور تسبیحا ت پڑھ کر ان کو زیادہ سے زیادہ ایصال ثواب کریں ۔ آمین

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.