سورۃ الفاتحہ پڑھنے کی فضیلت۔ قرآن کی یہ چھوٹی سی سورۃ فاتحہ پڑھنے سے کیا فائدہ ملتا ہے!

آج ہم آپ کو سورۃ الفاتحہ جو کہ قرآن حکیم کی سب سے پہلی سورۃ ہے اس کی فضیلت کے بارے میں بتانا چاہتے ہیں۔ سورۃ الفاتحہ کس موقع پر نازل ہوئی؟ سورۃ الفاتحہ کے فضائل کیا ہیں؟ اگر صبح کے وقت جب دن کا آغاز ہوتا ہے اس مختصر سی سورۃ کو چار بار پڑھا جائے تو دنیا و آخرت میں اس سے کیا ثواب

حاصل ہوتا ہے اور سورۃ الفاتحہ کا وظیفہ کیا ہے؟سورۃ الفاتحہ کی فضیلت سورۃ الفاتحہ مکی ہے، اس میں 7 آیتیں ہیں ۔سورۃ الفاتحہ قرآن مجید کی سب سے پہلی سورت ہے جس کی احادیث میں بڑی فضیلت آئی ہے۔ الفاتحہ کے معنی” آغاز اور ابتدا “کے ہیں ۔اسی لیے اس کو”الکتاب” کہا جاتا ہے۔ اس کا ایک اہم نام “الصلوۃ” بھی ہے جیسا کہ حدیث قدسی میں ہے اللہ نے فرمایا: “میں نے الصلوة (نماز) کو اپنے اور اپنے بندے کے درمیان تقسیم کردیا ہے” ۔(صحیح مسلم) مراد سورہ فاتحہ ہے جس کا نصف حصہ اللہ کی حمد و ثناء اور اس کی رحمت و ربوبیت اور عدل و بادشاہت کے بیان میں ہے اور نصف حصے میں دعا و مناجات ہے جو بندہ اللہ کی بارگاہ میں کرتا ہے۔ اس حدیث میں سورہ فاتحہ کو “نماز” سے تعبیر کیا گیا ہے۔جس سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ نماز میں اس کا پڑھنا بہت ضروری ہوتا ہے۔شائخ نے لکھا ہے کہ اگر سورۃ الفاتحہ کو ایمان و یقین کے ساتھ پڑھا جائے تو ہر بیماری سے شفا ہوتی ہے ۔اس سورہ کے 30 نام اور بھی مذکور ہوئے ہیں اور شاید قرآن حکیم

کی یہی واحد سورہ ہے جو اتنے بہت سارے ناموں سے مشہور ہے۔ سورہ فاتحہ چونکہ اس سورہ سے قرآن حکیم کا افتتاح ہوتا ہے اس لیے یہ سورہ فاتحہ کہلاتی ہے۔ اس کا پورا نام “فاتحہ الکتاب” یعنی کتاب کا افتتاح کرنے والی سورہ ہے اس سورہ کو افضل القرآن کا نام بھی دیا گیا ہے اور یہ نام اس کی عظمت و رفعت پر دلالت کرتا ہے۔ اس کے علاوہ احادیث میں بھی اس سورہ کے 30 نام اور بھی مذکور ہوئے ہیں اور شاید قرآن حکیم کی یہی واحد سورہ ہے جو اتنے بہت سارے ناموں سے مشہور ہے۔ اس کا ایک نام” ام القرآن ” بھی ہے۔ اسے ام القرآن اس لیے کہتے ہیں کہ یہ سورہ قرآن حکیم کے تمام مضامین کا نچوڑ ہے اور تمام روحانی عقائد کی بنیاد ہے۔ بعض علماءنے فرمایا ہے کہ سورہ فاتحہ متن ہے اور پورا قرآن اس متن کی شرح ہے۔ اس سورہ کو”سورہ الشفا” بھی کہا جاتا ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ سورہ مختلف بیماریوں کیلئے وجہ شفا ثابت ہوئی ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں ایک مرتبہ کسی شخص کو سانپ نے کاٹ لیا۔ حضرت ابوسعید خدری نے سورہ فاتحہ پڑھ کر اس شخص پر دم کیا تو وہ ٹھیک ہوگیا۔ تفسیر بیضاوی میں ایک حدیث نقل کی گئی ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ سورہ فاتحہ تمام جسمانی بیماریوں کیلئے شفاءہے۔ اس سورہ کا ایک نام “کافیہ” بھی ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.