جب ہار ماننے لگو ؟ تو دو با تیں ضرور یاد رکھنا؟ سو فیصد کامیاب ہو ں گے۔

جن میں تنہا چلنے کے حوصلے ہو تے ہیں ۔ ایک دن اُنہی کے پیچھے قافلے ہو تے ہیں۔ کُتے بھونکتے ہیں اپنے ہونے کا احساس دلانے کے لیے جنگل کا سنا ٹا شیر کی موجود گی بیان کر تا ہے! اگر راستہ خوبصورت ہے تو معلوم کر و کہ کس منزل کو جا تا ہے لیکن اگر منزل خوبصورت ہے تو راستے کی پرواہ

نہ کرو۔ اس کائنات کا ایک سب سے بڑا سچ ہے اور وہ یہ ہے کہ انسان جو کوئی بھی ہو اور کچھ بھی کر ے لیکن جب وہ کچھ کرنے کا ارادہ کر تا ہے تو وہ ہو کر رہتا ہے۔ شاخیں رہیں تو پھول بھی پتے بھی آ ئیں گے یہ دن اگربرے ہیں تو اچھے بھی آ ئیں گے۔ اوپر اٹھنے میں وقت تو لگتا ہے پھر چاہے سورج ہی کیوں نہ ہو دھیرے دھیرے اگھتا ہے۔ تنقید ، فقرے بازی اور طنز سے حوصلے نہ ہاو شور کھلاڑی نہیں تما شائی کیا کر تے ہیں۔ کچھ نہیں ملتا اس دنیا میں محنت کے بگیر مجھے اپنا سایہ بھی دھوپ میں جانے کے بعد ملا۔ کا میابی صرف جھکنے سے ہی نہیں ملتی کبھی کبھی آپ کو سر اٹھا نا پڑتا ہے اپنے حق کے لیے۔ منزل تو ملے گی بھٹک کر ہی سہی۔ گمراہ تو وہ ہیں جو گھر سے نکلے ہی نہیں! وقت گہرے سمندر میں گِرا ہوا موتی ہے جس کا دوبارہ ملنا نا ممکن ہے۔ 1۔قطبِ شمالی کے آسمان سے سال کے 186 دن تک سورج مکمل طور پر غائب رہتا ہےسونے کی جتنی زیادہ کوشش کریں نیند آنے کی توقع اتنی ہی کم ہے۔ کی بورڈ کی آخری لائن میں موجود بٹنوں سے آپ انگلش کا کوئی لفظ نہیں لکھ سکتے ۔انسانی دماغ ستر فیصد وقت پرانی یادوں یا مستقبل کی سنہری یادوں کے خاکے بنانے

میں گزارتا ہے۔پندرہ منٹ ہنسنا جسم کے لیے اتنا ہی فائدہ مند ہے جتنا دو گھنٹے سونا۔کسی بھی بحث کے بعد پچاسی فیصد لوگ ان تیزیوں اور اپنے تیز جملوں کو سوچتے ہیں جو انھوں نے اس بحث میں کہے ہوتے ہیں۔ ایسا جملہ ہے جس میں اسے دائیں سے پڑھ لیں یا بائیں سے، ایک ہی بات بن سکتی ہے صرف کچھ سپیس کو درست کرلیں تو۔ فلاسفی میں ایک لمحے کا مطلب ہوتا ہے نوے سیکنڈسردی کی کھانسی میں چاکلیٹ کھانسی کے سیرپ سے پانچ گنا زیادہ بہتر اثر دکھاتی ہے،لہٰذا سردی والی کھانسی میں چاکلیٹ کھایا کریں جتنی مرضی کوشش کر لیں جو مرضی کر لیں آپ یہ یاد نہیں کر سکتے آپ کا خواب کہاں سے شروع ہوا تھا۔کوئی بھی جذباتی دھچکا پندرہ یا بیس منٹ سے زیادہ نہیں ہوتا اس کے بعد کا جذباتی وقت آپ کی اس کے بارے میں زیادہ سوچنے کی وجہ سے ہوتا ہے، جس سے آپ خود کو زخم لگاتے ہیں، عام طور پر آپ اپنے آپ کو آئینے میں حقیقت سے پانچ گنا زیادہ حسین دیکھتے ہیں،یا سمجھتے ہیں۔سائنس کے مطابق نوے فیصد لوگ اس وقت گھبرا جاتے ہیں جب انھیں یہ پیغام آتا ہے کہ،کیا مَیں آپ سے ایک سوال پوچھ سکتا ہوں؟ مَیں بھی اکثر آپ کا یہ پیغام پڑھ کر چونک سا جاتا ہوں کہ معلوم نہیں کیا پوچھنا چاہتے ہیں۔ زمین کے سب سے نزدیک ستارہ سورج ہے جو زمین سے 93 ملین میل دور واقع ہے مکھی ایک سیکنڈ میں 32 مرتبہ اپنے پر ہلاتی ہے دنیا کے 26 ملکوں کو سمندر نہیں لگتا

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.