واک ، اگر آپ سے نہیں ہوتی

جب کبھی میرا موڈ خراب ہوتاہے۔ مجھے غ صہ آتا ہے۔ کوئی مجھے تنگ کرتا ہے۔ میری طبیعت ٹھیک نہیں ہے۔ مزاج خراب ہے۔ میرا پاس ایک ہی حل ہوتا ہے۔ میں جوتی پہن لیتا ہوں۔ جوگر پہن لیتاہوں۔ اور واک پر چلا جاتا ہوں۔ اس سے زیادہ ذہنی سکون ، جسمانی سکون کسی چیز میں مجھے نہیں ملتا۔ اب ڈاکٹر کہتے ہیں کہ

واک سے آپ کے بلڈ سرکلویشن بہتر ہوتی ہے۔ ڈائجیشن بہتر ہوتی ہے۔ کاڑڈیووسکو لرز بیماری جو ہے اس میں امپورومنٹ آتی ہے۔ جوائنٹس کا جو درد ہے اس میں بہتری آتی ہے۔ آپ کا جو فیٹ ہے وہ برن ہوجاتا ہے۔ ڈائجیشن بہتر ہوجاتی ہے۔ آپ کا اسٹیمنا بلڈ ہوتاہے۔ آپ کا امیون سسٹم بہتر ہوجاتاہے۔ جن لوگوں کو کچھ کیے بغیر صرف بستر پرپڑے ہوئے آرام ملتا ہے۔سکون ملتا ہے۔وہ الٹی میٹلی وہ موٹاپے کا ، سستی کا ، کولیسٹرول کا ، دل کی بیماریوں کا ، جوڑوں کے امراض کا، قبل از وقت بڑھاپے کا ، بے شمار چیزوں کا شکار ہوجاتاہے۔ تو انہیں عادی بنانا ہوگا۔ انہیں ایکسرسائز کا عادی بنانا ہوگا۔ تو یہ واک اور ایکسرسائز کا عادی ہم کیسے خود کو بنائیں ؟ کم ازکم دن میں تیس منٹ واک چاہیے۔ اچھی واک نوےمنٹ ہے۔ یہ ڈیڑھ گھنٹہ ہے۔ تو اگر آپ کو اکٹھا ٹائم نہیں ملتا۔ تو آپ دس دس منٹ میں تین دفعہ بھی واک کرسکتے ہیں۔ جب آپ اپنے آپ کو عادی بنالیتے ہو۔کہ پہلے تیس منٹ واک کرتے ہو۔ تو آپ کے جسم کےاندر جو کاربوہائیڈریٹ وہ کافی حد تک برن ہوجاتے ہیں۔ اس کے بعد باری آتی ہے فیٹ کی۔ جو آپ کے جسم میں اکٹھا ہوا ہے۔ آدھے گھنٹے کے واک میں آپ تین ہزار سے لے کر ساڑھے چار ہزار قدم جو کہ موبائل کے اندر ایپ ہیں۔ ا س کے مطابق چلتے ہو۔ یا آپ دو سے تین کلو میٹر تک واک کرتے ہو۔ اس دوران سو سے تین سو کیلوریز آپ برن کر لیتے

ہو۔ میں نے اپنے جسم کو عادی بنانا ہے۔ کہ مجھے بیٹھنے میں سکون نہ ملے۔ مجھے چلنے میں سکون ملے ۔ جب تک ایک ڈیڑ ھ گھنٹہ چل نہ آؤں۔ جب تک میں ایک ڈیڑھ گھنٹے واک نہ کرآؤں۔ مجھے سکون نہ ملے ۔ میں اپنا جسم ویسا بنانا چاہتا ہوں۔ اس کےلیے کیا کرنا پڑے گا؟ صرف پانچ سے دس منٹ روزانہ واک کرنی پڑے گی۔ آ کر بیٹھ جائیں ۔ اگلے دن آپ تھوڑی سی بڑھائیں۔ چند منٹ بڑھائیں۔ آہستہ آہستہ آپ ایک ہزار قدم تک جا ئیں۔ پھر آپ دوہزار قدم ، تین ہزار تک،کرتے کرتے جب آپ کے ایک گھنٹے کے اندرچھ ہزار قدم ہوں گئے ۔ تو اس دن آپ نے محسو س کرنا ہے۔ کہ اب میں نے کچھ حاصل کرلیا ہے اس کے بعد آپ نے جو چھ ہزار قدم ہیں۔ اب آپ نے وہ پچاس منٹ میں مکمل کرنے ہیں ۔تھوڑی اسپیڈ بڑھانی ہے۔ پھرآ پ نے کرنا ہے ۔ کہ میں نے چالیس منٹ میں مکمل کرنی ہے۔اور اسپیڈ بڑھانی ہے۔ کتنی اسپیڈ بڑھانی ہے؟ وہ کہتے ہیں کہ اتنی اسپیڈ بنا لے۔ برسٹ واک کیا ہے؟ اتنی اسپیڈ بنالیں۔ جب آپ تیز واک کریں۔ تو اس کے بعد آپ کا سانس اتنا پھولا ہو کہ آپ پورا فقرہ بول لیں۔ لیکن آپ گانا نہ گا سکیں۔ آئیڈیل آپ کا یہ ہے کہ آپ جب نوے منٹ تک واک کریں۔ اور اس میں ہوسکتاہے۔ آپ کو ایک مہینہ ، دو مہینے یا ایک سال بھی لگ جائے۔ پھر کیا ہوگا؟ کہ آپ کو بیٹھ کر سکون نہیں آئے گا۔ جب تک آپ واک نہ کرلو۔ واک کس وقت کرنی چاہیے ؟ جب پیٹ خالی ہو۔ بھرے پیٹ کے ساتھ کبھی واک نہ کریں۔ کھانے کے بعد ہلکی سی چہل قدمی رات کو کر لیا کریں۔ دوپہر کو قیلولہ کرلیا کریں۔ لیکن واک کرنے کاوقت ایک صبح ہے۔ اور ایک شام کا وقت ہے۔ جب آپ کا پیٹ خالی ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.