چلتے پھرتے اللہ پاک کا یہ نام پڑھتے رہیں انشاء اللہ ہر کام آسان ہوگا

آج ہم اللہ تعالیٰ کے پیارے سے نام ایک مجرب وظیفہ بتائیں گے ۔ اس آسان سے وظیفہ کی برکت سے اللہ تعالیٰ آپ کے ہر کام میں آسانی پیدا فرمائے گا۔ آپ جس بھی نئے کا م کا آغاز کریں گے ۔ آپ کا وہ کام احسن طریقے سے پورا ہوجائیگا۔ یا اسی طرح آپ کی کوئی بھی حاجت ہو جو پوری نہ ہورہی ہو جائز حاجت آپ کی جو بھی

ہوگی اس عمل کیوجہ سے پوری ہوگی ۔ اللہ تعالیٰ کا وہ بابرکت نام یا وکیلُ کو چلے پھرتے اٹھتے بیٹھتےیہ نام پڑھتے رہا کریں باوضو ہو تو بہتر لیکن بغیر وضو کے بھی کرسکتے ہیں ۔ جس بھی کام میں آسانی چاہتے ہوں اور یا وکیلُ پڑھتے رہیے ۔ آپ کی کوئی بھی حاجت ہے جو پوری نہ ہورہی اس کو ذہن میں رکھ کر یہ نام بکثرت پڑھتے رہنے کی عادت بنالیجئے ۔ آپ جس بھی مقصد کیلئے یہ وظیفہ کریں گے ۔ آپ کو ا س مقصد میں ضرور کامیابی حاصل ہوگی ۔ اللہ تعالیٰ اس کے ہر کام میں آسانی پیدا فرماتا ہے ۔ جو بھی جائز تمنا ہوگا اس وظیفہ کی مدد سے دلی حاجت پوری ہوگی ۔ اپنے آپ کو ہر طرح کے گناہوں سے بچائے رکھیں۔ حقوق العباد کا خیال رکھنا ہے تو انشاء اللہ ضرور فائدہ ہوگا۔ اللہ کے ناموں کے وظائف کی برکات اور فضیلت بہت ہی جس سے مخلوق خدا فیض یاب ہورہی ہے۔اَحادیث میں اسماءِ حسنیٰ کے بہت فضائل بیان کئے گئے ہیں ، ترغیب کے لئے دو احادیث درج ذیل ہیں :(1)…حضرت ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے، رسول اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’بے شک اللہ تعالیٰ کے ننانوے نام ہیں یعنی ایک کم سو، جس نے انہیں یاد کر لیا وہ جنت میں داخل ہوا۔ (بخاری، کتاب الشروط، باب ما یجوز من الاشتراط والثّنیا فی الاقرار۔۔۔ الخ، ۲ / ۲۲۹، الحدیث: ۲۷۳۶)حضرت علامہ یحیٰ بن شرف نووی رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ فرماتے ہیں ’’علماء کا اس

پر اتفاق ہے کہ اسمائے الہٰیہ ننانوے میں مُنْحَصِر نہیں ہیں ، حدیث کا مقصود صرف یہ ہے کہ اتنے ناموں کے یاد کرنے سے انسان جنتی ہو جاتا ہے۔ (نووی علی المسلم، کتاب الذکر والدعاء والتوبۃ۔۔۔ الخ، باب فی اسماء اللہ تعالٰی وفضل من احصاہا، ۹ / ۵، الجزء السابع عشر) (2)…ایک روایت میں ہے کہ ’’اللہ تعالیٰ کے ننانوے نام ہیں جس نے ان کے ذریعے دعا مانگی تو اللہ تعالیٰ اس کی دعا کوقبول فرمائے گا۔(جامع صغیر، حرف الہمزۃ، ص۱۴۳، الحدیث: ۲۳۷۰)اللہ تعالٰی کے ننانوے اَسماء :حدیثِ پاک میں اللہ تعالیٰ کے یہ ننانوے اسماء بیان کئے گئے ہیں : ’’ہُوَ اللہُ الَّذِیْ لَا اِلٰہَ اِلَّا ہُوَ الرَّحْمٰنُ الرَّحِیْمُ الْمَلِکُ الْقُدُّوْسُ السَّلَامُ الْمُؤْمِنُ الْمُہَیْمِنُ الْعَزِیْزُ الْجَبَّارُ الْمُتَکَبِّرُ الْخَالِقُ الْبَارِءُ الْمُصَوِّرُ الْغَفَّارُ الْقَہَّارُ الْوَہَّابُ الرَّزَّاقُ الْفَتَّاحُ الْعَلِیْمُ الْقَابِضُ الْبَاسِطُ الْخَافِضُ الرَّافِعُ الْمُعِزُّ الْمُذِلُّ السَّمِیْعُ الْبَصِیْرُ الْحَکَمُ الْعَدْلُ اللَّطِیْفُ الْخَبِیْرُ الْحَلِیْمُ ا لْعَظِیْمُ الْغَفُوْرُ الشَّکُورُ الْعَلِیُّ الْکَبِیْرُ الْحَفِیظُ الْمُقِیتُ الْحَسِیبُ الْجَلِیلُ الْکَرِیمُ الرَّقِیْبُ الْمُجِیبُ الْوَاسِعُ الْحَکِیمُ الْوَدُودُ الْمَجِیدُ الْبَاعِثُ الشَّہِیدُ الْحَقُّ الْوَکِیلُ الْقَوِیُّ الْمَتِینُ الْوَلِیُّ الْحَمِیدُ الْمُحْصِی الْمُبْدِءُ الْمُعِیدُ الْمُحْیِیْ الْمُمِیتُ الْحَیُّ الْقَیُّومُ الْوَاجِدُ الْمَاجِدُ الْوَاحِدُ الصَّمَدُ الْقَادِرُ الْمُقْتَدِرُ الْمُقَدِّمُ الْمُؤَخِّرُ الْاَوَّلُ الآخِرُ الظَّاہِرُ الْبَاطِنُ الْوَالِی الْمُتَعَالِی الْبَرُّ التَّوَّابُ الْمُنْتَقِمُ الْعَفُوُّ الرَّءُوْفُ مَالِکُ الْمُلْکِ ذُو الْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ الْمُقْسِطُ الْجَامِعُ الْغَنِیُّ الْمُغْنِی الْمَانِعُ الضَّارُّ النَّافِعُ النُّورُ الْہَادِی الْبَدِیعُ الْبَاقِی الْوَارِثُ الرَّشِیدُ الصَّبُورُ‘‘(ترمذی، کتاب الدعوات، ۸۲-باب، ۵ / ۳۰۳، الحدیث: ۳۵۱۸اسماءِ حسنٰی پڑھ کر دعا مانگنے کابہترین طریقہ:اس موقع پراسمائے باری تعالیٰ پڑھ کر دعا مانگنے کا ایک بہترین طریقہ حاضرِ خدمت ہے’’ بزرگ فرماتے ہیں : جو شخص اس طرح دعا مانگے کہ پہلے کہے ’’اَللّٰہُمَّ اِنِّیْ اَسْاَلُکَ یَارَحْمٰنُ، یَارَحِیْمُ ‘‘ پھر ’’رحیم‘‘ کے بعد سے تمام اسمائے مبارکہ حرفِ ندا کے ساتھ پڑھے (یعنی یِامَلِکُ، یَاقُدُّوْسُ، یَاسَلَام…یونہی آخر تک) جب اسماء مکمل ہو جائیں تو یوں کہے ’’اَنْ تُصَلِّیَ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّاٰلِہٖ وَاَنْ تَرْزُقَنِیْ وَجَمِیْعَ مَنْ یَّتَعَلَّقُ بِیْ بِتَمَامِ نِعْمَتِکَ وَدَوَامِ عَافِیَتِکَ یَا اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْن‘‘پھر دعا مانگے، ان شاءَاللہ عَزَّوَجَلَّ مراد پوری ہوگی اور کبھی دعا رد نہ ہو گی۔ (روح البیان، الاعراف، تحت الآیۃ: ۱۸۰، ۳ / ۲۸۲)

)

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.