کچے آموں کے فائدے

کچے آموں کے وہ فائدے جو ڈاکٹرز آپ سے چھپاتے ہیں۔ آپ کو کچے آم کے وہ فائدے بتائیں گے ۔ جو آپ کوکسی ڈاکٹرز نے نہیں بتائیں ہوں گے ۔ کچے اور پکے ایک لذیذ صحتمند اور دنیا میں بہت زیادہ کھایا جانے والا پھل ہے۔ مگر کچا آم بھی صحت کےلیے بہت مفید ہے۔ یہ بھی اپنے اندر بے شمار غذائی اور دوائی

اثرات رکھتا ہے۔ کچے آم میں وٹامن بی ون اور بی ٹو پکے ہوئے آم کی نسبت کہیں زیادہ ہوتا ہے۔ کچے سبز آم جن کو کیڑی بھی کہا جاتا ہے۔ معدے اور انتڑیوں کے علاج کے لیے بہت مفید ہے۔ ایک یا دو کچے آم جن کی گٹھلی ابھی تک نہ بنی ہو۔ نمک او ر شہد کےساتھ کھانا ، گرمی ، اسہال ، پیچیش، بواسیر، صبح کےوقت ہونےوالی کمزوری، پرانی بد ہضمی اور قبض کے لیے بہت مؤثر علاج ہے اینٹی آکسیڈ ینٹس سے بھر پور اور خاص طور پر بیٹا کیروٹین سے مالا مال کچے آم کینسر کا خطرہ بھی کم کرتے ہیں۔ کیونکہ یہ پھل مجموعی طور پر قوت مدافعتی نظام کو مضبوط بنانے میں معاون ہے۔ لہٰذ اکچے آموں کا استعمال آپ کو اس طرح کے جان لیوا بیماریاں ہونے کاخطرہ کم کرتا ہے۔ کچے آم پر نمک لگانے کر کھانےسے پیاس کی شدت کم ہوجاتی ہے۔ جبکہ پسینے کی وجہ سے ہونے والے نمک کی کمی بھی پوری ہوجاتی ہے۔ کچے آم فرحت بخش نہیں بلکہ یہ شدید گرمی کےاثرات کو کم کرکے ڈی ہائیڈریشن کی روک تھام کرتا ہے۔ گرمیوں کی پسینے کی شکل میں بہت زیادہ سوڈیم کلو رائیڈ اور آئرن خارج ہوتا ہے۔ جس سے جسم ڈی ہائیڈریش کا شکار ہوسکتاہے۔ جبکہ کیڑی کا شربت اسے بچانے میں مدد دیتاہے۔ کچے آم میں نہ صرف اینیمیا، ٹی بی اور پیچیش سےبچاؤ کے لیے جسم کی قوت مدافعت یعنی امیون سسٹم کو طاقت ور بنانے کی صلاحیت پائی جاتی ہے۔ جبکہ یہ جگرکو صحت مند

بنا تا ہے۔ مثانے کی پتھری دور کرنے کےلیے صبح نہا رمنہ کچے آم دو تین تولے روزانہ کھانے سے فائدہ ہوتا ہے۔ یہ خوش ذائقہ پھل نہ صر ف خ ون پیدا کرنے والا قدرتی ٹانک ہے۔ بلکہ گ وشت بناتا ہے اور پٹھوں کو مضبوط کرتا ہے۔ اس کے علاوہ کچے آم میں فاسفورس ، کیلشیم ، پوٹاشیم ، فولا د اور گلو کوز بھی ہوتا ہے۔ اسی لیے دل ، دماغ اور جگر کے ساتھ ساتھ سینے اور پھیپھڑوں کے لیے مفید ہے۔ کچے آم میں نیاسن نامی ایسڈ ہوتاہے۔ جو دل کےلیے صحت بخش جزو ہے۔ نیاسن خ ون سے جڑے امراض کا خطرہ کم کرتا ہے۔ جبکہ بلڈ گلو کو ز لیول کو کم کرتا ہے ۔ شدید گرمی سے بچنے کےلیے کچے آم کو آگ میں بھون کر اس کا نرم گودا اور شکر اور پانی میں ملا کر شربت کے طور پر استعمال کرنے سے گرمی کےاثرات کم ہوجاتےہیں۔ کیڑی میں موجود وٹامن سی خ ون کی نالیوں نہ صرف لچکدا ربنا تا ہے بلکہ خ ون کی خلیات کی تشکیل میں بھی مدد گار ہوتا ہے۔ اور غذا میں موجود آئرن کو جسم میں جذب کرنے میں یہ وٹامن معاونت کرتا ہے۔ اور جریان خ ون کو روکتا ہے۔ کچے آم میں وٹامن اے کی وافر مقدار اس کوآنکھوں کے امراض کے لیے بہترین پھل بنا دیتی ہے۔ اس کوآنکھوں کی بیماری شب کوری جس میں رات کے وقت دیکھنے میں دشواری ہوتی ہے۔ اس میں بھی مفید پایا گیا ہے ۔ کچے آم پیس کر آنکھ پر باندھنےسے آنکھ کے درد میں افاقہ ہوتاہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *