بارہ رمضان اتوار کو یہ وظیفہ لازمی کریں افطاری کے وقت اللہ کے یہ دو نام بڑی سے بڑی درپیش حاجت پوری ہوگی

خدواندکریم اپنے بندے کے لیے عبادت کے لیے جتنے بھی طریقے بتائیں ہیں۔ ان میں کوئی نہ کوئی حکمت ضرور پوشید ہ ہے۔ نماز خدا کے وصل کا ذریعہ ہے ۔ اس میں بندہ اپنے محبوب حقیقی سے گفتگو کرتا ہے۔ روزہ بھی خدا تعالیٰ سے لو لگانے کا ایک ذریعہ ہے ۔ حدیث مبارکہ میں ہے کہ رمضان اللہ تعالیٰ کا مہینہ ہے۔ جس سے

پتہ چلا کہ اس مبارک مہینے سے رب ذوالجلال کا خصوصی تعلق ہے ۔ جس کی وجہ سے یہ مہینہ دوسروں مہینوں سے ممتا زاور جدا ہے۔ ایک اور حدیث مبارکہ میں کہ رمضان ایسا مہینہ ہے کہ اس کے اول حصہ میں حق تعالیٰ کی رحمت برستی ہے جس کی وجہ سے انورو اسرار ظاہر ہونے کی قابلیت و استعداد پیدا ہو کر گن ا ہوں کی ظلمت اور معصیت سے نکلنا میسر ہوتا ہے۔ اور اس مبار ک ماہ کا درمیانی حصہ گن اہوں کی مغفرت کا سبب ہے۔ اور اس ما ہ کے آخری حصہ میں دوزخ کی آگ سے آزادی حاصل ہوتی ہے۔ حضرت ساحر بن سعد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جنت کا ایک دروازہ جس کا نام “ریان ” ہے جس سے قیامت کے دن صرف روزے دار گزریں گے۔ اس کے علاوہ اس دروازے کوئی دوسرا نہیں گزرے گا۔ آج ہم آپ کو خیرو برکت کے لیے اللہ تعالیٰ کے دو اسمائے مبارک کا ایک آسان سا عمل بتائیں گے ۔آج کو جو عمل ہے یہ خیر وبرکت کے حوالے سے ہے۔ اگر آپ اس عمل کوکرتے ہیں۔ تو اللہ تبارک وتعالیٰ آپ کے رزق میں برکت عطافرمائیں گے۔ آپ کے کاروبار میں برکت عطافرمائیں گے ۔ آپ کی زندگی میں خیروبر کت ہوگی۔ بالخصو ص یہ وظیفہ ان

کے لیے خاص ہے جو غریب ہیں۔ تنگدست ہیں۔ مفلس ہیں۔ یا پھر مقروض ہیں۔ ایسے حضرات آج کے اس عمل کو کرتے ہیں۔ تو اللہ تبارک وتعالی ٰ ان کی تنگدستی ، ان کی غربت اور ان کے افلاس کو دور فرمائیں گے۔ اگر وہ مقروض ہوں گے ۔ تو اللہ تعالیٰ کے کرم سے ان کے قرض کو اد اکرنے میں آسانی پیدا ہوجائے گی۔ اللہ تعالیٰ کوئی نہ کوئی ایسا ذریعہ بنا دیں گے ۔ جس کی وجہ سے ان کا قرض ادا ہوجائے گا۔ اب ہم آپ کو بتاتے ہیں کہ وہ عمل کیا ہے؟ آپ نے اس کو کس وقت اور کیسے کرنا ہے؟ یہ اللہ تبارک وتعالیٰ کے دو اسم مبارک ہیں۔ “یا مطیع،یا شکور” کا ایک خاص عمل ہے۔ یہ آپ نے ماہ رمضان میں افطار سے قبل یعنی افطاری کے وقت اس عمل کو کرناہے۔ آپ نے اللہ تعالیٰ سے ان دونوں اسما ء ” یا مطیع، یا شکور” کو ایک ساتھ اکیس مرتبہ ورد کرنا ہے۔ پھر آ پ نے افطاری سے قبل جس وقت کے بارے میں کہا جاتا ہے اللہ تبارک وتعالیٰ روزے دار کی ایک دعا کو ضرور قبول فرماتا ہے۔ اس وقت آپ نے اس عمل کوکر کے اللہ تبارک وتعالیٰ سے عاجز ی و انکسار ی کے ساتھ اپنی حاجت کے لیے دعا کرنی ہے۔ اپنی ضرورت کے لیے دعاکرنی ہے۔ جو بھی آپ کی حاجت ہے ضرورت ہے مشکل ہے ۔ اس کے لیے دعا کریں۔ انشاءاللہ! اللہ تعالیٰ آپ کی دعا کو ضرو ر قبول فرمائیں گے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *