سالن میں نمک کم کرنے کا نیا آسان طریقہ آ گیا۔

اگر آپ کے سالن کے اندر نمک زیادہ پڑ جا ئے تو آپ چاہتے ہیں کہ سالن بھی ضائع نہ ہو اور اس میں سے نمک بھی کم ہو جا ئے تو ہم آپ کو کچھ ایسی ٹپس بتانے والے ہیں جو پہلے آپ کو نہ کسی نے بتائی ہوں گی اور نہ کہیں سے آپ نے سنی ہوں گی ویسے تو ٹپس ہیں ۔ جیسا کہ اس کے اندر آ ٹے کی گولیاں بنا کر اگر

سالن کے اندر ڈالا جا ئے تو اس سے نمک کم ہو جا ئے گا لیکن آج ہم منفرد ٹپس بتانے والے ہیں۔ پہلی ٹپ یہ ہے کہ اگر آپ کے سالن میں نمک زیادہ پڑ جا ئے تو سفید کاغذ کا ٹکڑا لے کر ہانڈی میں ڈال دینا ہے اس سے کیا ہو گا کہ وہ ٹکڑا کاغذ کا اس میں جو زائد نمک ہے۔ وہ چوس لے گا اور نمک جب جذب ہو جا ئے گا تو آپ کے سالن میں سے نمک ہو جا ئے گا اس کے ساتھ ساتھ ایک اور ٹوٹکا یہ ہے کہ آپ اگر سالن کے اندر اگر نمک کم کر نا چاہتے ہیں تو آپ کو چا ہیئے کہ چھا لیاں جو پان وغیرہ کے اندر استعمال ہوتی ہے میٹھی چھالیاں نہیں دوسری جو کہ پان وغیرہ بنانے کے لیے لوگ استعمال کر تے ہیں آپ وہ ڈال سکتے ہیں تو اس سے بھی آپ کے سالن کا نمک کم ہو جا ئے گا۔ خواتین کھانے بنانے کی بہت شوقین ہوتی ہیں اور ان کی مرضی ہوتی ہے۔ کہ کھانا بہت ہی اچھا بنے کے سب پسند کریں۔ اور خاص طور پر جب مہمان وغیرہ آجائے۔ تو اس وقت آپ کی کوشش ہوتی ہے کہ آپ کھانا ایسا بنائیں ۔کہ سب پسند کریں اور بہت تعریف بھی ہو کھانے کی

اور خواتین بہت محنت سے کھانا وغیرہ تیار کرتی ہیں۔ اور ا س کے علاوہ بہت کوشش کرتی ہیں۔ کہ اس میں ہر چیز برابر و کبھی بھول کہ یا کبھی زیادہ کام کی وجہ سے پتہ ہی نہیں چلتا اور نمک کھانے یں زیادہ ہو جاتا ہے۔ اور اس وجہ سے خواتین اور بھی ڈر جاتی ہیں اور بہت زیادہ پریشانی کا شکار ہو جاتی ہیں۔اور اگر وہی کھانا ان سے نہ کھایا جائے۔ تو اس کو وہ پھنک دیتی ہیں کیونکہ مک زیادہ ہو جائے تو کھانا کھانے کے لا ئق نہیں رہتا۔ اور اس کے لیے آپ سالن کو ایسے ہی نہ پھینکھیں اگر نمک تھوڑا سا زیادہ ہو جاتا ہے۔ تو اس کے لیے آپ لیمؤں اس میں ڈال سکتے ہیں اس سے بھی نمک کم ہو جائے گا۔ اور یہ سرکہ کا استعمال کر لیں ۔ اس سے بھی نمک کا ذائقہ کم ہو جاتا ہے اور اس کے علاوہ اگر آپ کے سالن میں بہت زیادہ نمک مکس ہو گیا ہے۔کہ آپ سے نہیں کھایا جا رہا تو اس کے لیے آپ ایک اور ٹپس بھی استعمال کر سکتے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *