رمضان کر یم کا چاند دیکھتے ہی سات مر تبہ یہ اسم پڑھ لیں۔

بہت آسان عمل ہے عمل پچھلے سال بھی دیا گیا تھا اور بےشمار لوگ اس سے ہر سال فائدہ اٹھاتے ہیں رمضان کا چاند دیکھ کر اپنا بنیادی مطلب اور مقصد دل میں رکھتے ہوئے اللہ کا یہ اسم مبارک ہے اس کا ورد کر یں پھر اپنے مقصد کے لیے دعا ما نگیں اس وظیفہ کو اگر اس وقت تک

جا ری رکھا جا ئے جب تک خوشحالی نہ آ جا ئے تو یہ بہت افضل ہے کیونکہ رزق میں فراوانی کے لیے یہ بہت ہی مجرب عمل ہے جو لوگ یہ وظیفہ کر تے رہے ہیں آج وہ لاکھوں کروڑوں پتی ہیں حالات اس کے ساتھ بدل کر رہ جا تے ہیں کبھی نیچے نہیں جا تے اللہ کا شکر ادا کرنے میں بہت نعمت و فضیلت ہے۔ اگر آپ کے حالات کبھی اَپ اور کبھی ڈاؤن ہو جا تے ہیں تو اس سے ترقی کے دروازے ہمیشہ کے لیے کھل جا تے ہیں وسعت و بر کت اگر رزق میں بر کت اور اضافہ نہیں ہے آپ جو کماتے ہیں سب ختم ہو جا تا ہے بلکہ مہینے کے آخر میں ادھار مانگنے کی نو بت آ جا تی ہے ہاتھ میں پیسہ نہیں رکتا اس کے لیے ایک مجرب وظیفہ آپ کو بتا یا جا رہا ہے اس پر عمل کر یں انشاء اللہ رزق میں اضافہ بھی ہو گا اور خیر و بر کت بھی ہو گی آپ یہ وظیفہ چاند دیکھنے کے بعد آنے والے جمعرات جمعہ اتوار اور پیر کےدن کر سکتے ہیں یہ وظیفہ آپ نے

روزانہ عشاء کی نماز کے بعد کرنا ہے۔ وظیفہ کے شروع میں اور آخر میں درود شریف ضرور پڑ ھیں بہتر یہی ہو گا کہ آپ اسے اپنی زندگی کا حصہ بنا ئیں اور اس کی تسبیحات کر تے رہا کر یں انشاء اللہ آپ کی زندگی میں رزق کی فراوانی رہے گی اور آپ پیسوں میں کھیلتے رہیں گے کون سا وظیفہ کر نا ہے جمعرات جمعہ اتوار یا پیر کے دن یہ وظیفہ شروع کر یں اور خدا کی قدرت کا نظارہ دیکھیں مغرب کی نماز پڑ ھیں اور دعا مانگنے سے پہلے گیارہ بار درود شریف پڑھ کر ایک سو انتیس اسم الٰہی یا لطیفُ کا ورد کر یں ۔ اس کے بعد سورۃ شورہ آیت نمبر انیس نو مر تبہ پڑ ھیں گیارہ بار آخر میں بھی درود شریف پڑھیں اور رزق و روزگار کی ترقی کے لیے یا پھر بیروزگاری کے لیے دعا کر یں یہ وظیفہ چالیس دن تک کر یں انشاء اللہ بہت بر کت ہو گی اور اللہ تعالیٰ غیب کے دروازے آپ کے لیے کھول دیں گے آسانی ہو گی اس وظیفہ کو اگر اس وقت تک جا ری رکھا جا ئے جب تک خوشحالی نہ آ جا ئے تو یہ بہت افضل ہو گا کیونکہ رزق میں فراوانی کے لیے یہ بہت ہی مجرب عمل ہے جو لوگ یہ وظیفہ کر تے رہے ہیں وہ لوگ آج کل کروڑوں پتی ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *