حضور ﷺ کا بتایا ہوا قرض اتارنے کا وظیفہ!

روز مرہ زندگی سے مسائل لے کر قرآن و حدیث کی روشنی میں ان کے آسان حل تجویز کرنی والی ویب سائیٹ پر تمام قارئین کو خوش آمدید۔اس تحریر میں قرض اتارنے کا حضورﷺ کا بتاہوا ہوا عمل پیش کیاجارہا ہے ۔ حضرت معاذ بن جبل ؓ فرماتے ہیں ایک مرتبہ میں نماز جمعہ حضوراقدس ﷺ کی اقتداء میں نہ پڑھ سکا آپﷺ نے

فرمایا معاذنماز جمعہ میں کیوں نہیں آئے میں نے عرض کی یارسول اللہ ﷺ میرے ذمے یوحنا بن بارجہ یہودی کا ایک تولہ سونا قرض تھا وہ میرے دروازے پر میری طاق میں تھا اور مجھے خدشہ ہوا کہ مجھے کہیں آپﷺ تک پہنچنے سے روک ہی نہ لے وہ کافی دیر تک میرے دروازے کے باہر رہا اور جمعہ کی حاضری سے محروم رہا آپﷺ نے فرمایا اے معاذ تم چاہتے ہو کہ اللہ تعالیٰ تمہارے قرض کی ادائیگی کی کوئی صورت بنا دے عرض کی جی ہاں تو آپ ﷺ نے فرمایا سورۃ آل عمران کی 26 اور 27 نمبر آیت پڑھ لیا کرو وہ آیت یہ ہے: قُلِ اللّـٰـهُـمَّ مَالِكَ الْمُلْكِ تُؤْتِى الْمُلْكَ مَنْ تَشَآءُ وَتَنْزِعُ الْمُلْكَ مِمَّنْ تَشَآءُۖ وَتُعِزُّ مَنْ تَشَآءُ وَتُذِلُّ مَنْ تَشَآءُ ۖ بِيَدِكَ الْخَيْـرُ ۖ اِنَّكَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ قَدِيْرٌ (26) تُوْلِجُ اللَّيْلَ فِى النَّـهَارِ وَتُوْلِجُ النَّـهَارَ فِى اللَّيْلِ ۖ وَتُخْرِجُ الْحَىَّ مِنَ الْمَيِّتِ وَتُخْرِجُ الْمَيِّتَ مِنَ الْحَيِّ ۖ وَتَـرْزُقُ مَنْ تَشَآءُ بِغَيْـرِ حِسَابٍ (27)۔ اور اس کے بعد اس دعا کو پڑھو۔ رحمنَ الدُّنيا والآخرةِ ورحيمَهما تعطيهما من تشاءُ وتمنعُ منهما من تشاءُ ارحَمْني رحمةً تُغنيني بها عن رحمةِ من سواك ۔ آپ ﷺ نے فرمایا اگر تمہارے ذمے ذمین بھر سونا بھی قرض ہوتو اللہ اس کی ادائیگی کی سبیل پیدا فرما دے گا یہ عمل آپﷺ کا بتایا ہوا عمل ہے ،آپ یہ وظیفہ ضرور آزمائیے انشاء اللہ آپ کو فائدہ ہوگا۔شکریہ

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *