جب کوئی نئی نویلی دلہن شوہر کے سینے سےلگ کر روئے توسمجھ جائیں کہ ؟

اک پل میں راکھ ہوگیا جو صدیوں کا سرمایا تھا آنکھیں ہی نکال کر لے گیا وہ جو آ ن سو پونچھنے آیا تھا ۔انسان ایک دوسرے سے کوئی زیادہ مختلف نہیں جو غلطی ایک مرد کرتا ہے دوسرا بھی کرسکتا ہے ۔ جب ایک عورت بازا رمیں دکان لگا کر اپنا جسم بیچ سکتی ہے تو دنیا کی سب عورتیں ایسا کرسکتی ہیں ۔ لیکن غلط کار انسان

نہیں وہ حالات جن کے کھیتوں میں انسان اپنی غلطیاں پیدا کرتا ہے اور ان کی فصلیں کاٹتا ہے ۔ کوئی ہنستے کھلکھلاتی لڑکی اچانک کسی سہانے موسم میں صرف اس وجہ سے بے انتہاء اداس ہوجاتی ہے کیونکہ بہار کے موسم میں کسی نے اس سے کہا تھا کہ وہ اس سے محبت کرتا ہے ۔کوئی لڑکا کسی شہر کے خاص ریسٹورینٹ کی خاص میز پر گھنٹوں سگریٹ پیتے گزار دیتا ہے کیونکہ یہاں کسی نے اس سے آخری ملاقات کی تھی ۔ کوئی نئی نویلی دلہن ایک انتہائی محبت کرنیوالے شوہر کے سینے سے لگی کسی ایسے لڑکے کیلئے آنکھیں نم کیے بیٹھی ہے جو اس سے کبھی محبت کرتا ہی نہیں تھا ۔کوئی باس انٹرویو لیتے ہوئے اس ذہین وفطین لڑکی کو صرف اس وجہ سے ریجیکٹ کردیتا ہے کہ وہ اسے اس لڑکی کی ہم شکل دکھائی دیتی تھی جس نے اس سے بے وفائی کی تھی ۔ کوئی عورت اپنےبچے کو سکول چھوڑنے جاتے وقت بچوں کی بھیڑ میں اس بچے کی ایک جھلک دیکھنے رُک جاتی ہے جس کے باپ نے کبھی اس کا چہرہ ہتھیلیوں میں بھر کر کہا تھا ہمارے بچے

کی ناک تمہاری طرح ہوگی اور آنکھیں میری طرح ۔کوئی انتہائی ذہین لڑکا صرف اس وجہ سے بیرون ملک جابستا ہے کہ اس کا عشق اس سے نہ مل پایا اور بدلے میں اس سے وابستہ ہر چیز اسے منہ چڑاتی ہے ۔کوئی بڑھیا گھر والوں سے نظر بچا کر اپنے صندوق کی تہہ میں رکھے چند پیلے بوسیدہ خط نکال کر جلاتی ہے اور پھر رودیتی ہے ۔ کوئی بوڑھا صرف اس وجہ سے ایک پرانی گلابی رنگ لگی چادر کو برسوں سے سنبھالے ہوئے ہے کہ کسی نے اسے اپنے سرخ دوپٹے کے ساتھ دھوڈالا تھا اوہ محبت تم سب کیلئے سرخ گلاب نہیں ہو۔ بادلوں میں اور انسانی خیالات میں کوئی فرق نہیں ہوتا ہے اس لمحے کچھ اور اگلے ہی لمحے میں کچھ ۔جس طرح سے سورج چاند اور ستارے نکلتے ہیں تو یہ سب کیلئے نکلتے ہیں بلکل اسی طرح سے جب علم پھیلتا ہے تو یہ سب کیلئے پھیلتا ہے علم کو کبھی بھی محدود مت کریں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *