چہرے کی چمک اور بالوں کی چمک اور گروتھ دونوں مسائل حل

چہرے پر رونق نہیں چہرے کا رنگ تو گورا ہے لیکن چمک نہیں بال ہیں تو لمبے لیکن روکھے ہیں بالوں میں شائننگ نہیں بالوں میں گنجا پن ہے بال جھڑتے بہت ہیں ان سب مسائل کا سامنا ہے تو بالکل یہ تحریر آپ ہی لوگوں کے لئے ہےآپ ایک سفید چنے کے پاؤڈر کو استعمال کرتے ہوئے ریمیڈی بنا سکتے ہیں اور ان مسائل سے

چھٹکارا پاسکتے ہیں ۔سفید چنا سفید کچا چنا جیسے کہ اس کے صحت کے لحاظ سے فائدے ہیں ویسے ہی خوبصورتی کے لحاظ سے بھی بہت فائدے ہیں ۔یہ بہت زبردست خوبصورتی کا انگریڈینٹ ہے خوبصورتی پیداکرنے والا ہے اور وہ بھی چہرے کی رونق لانے کے لئے اس کو استعمال کیاجاتا ہے ایک تو یہ چہرے کی خوبصورتی میں اضافہ کرتے ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ یہ آپ کے بالوں کو مضبوط بناتا ہے ۔ .اس کا ہماری روز مرہ کی غذا کے طور پر استعمال صحت پر انتہائی مثبت اثرات مرتب کرتا ہے ۔ اسے کھانے کے طور پر سبزیوں کیساتھ، سلاد میں، روٹی بنانے میں، حمس تیار کرنے اور چٹنیاں بنانے کے علاوہ کئی دوسرے طریقوں سے استعمال کیا جاتا ہے ۔چنوں کے صحت کے لیے زبردست اور منفردفوائد سے تو کوئی انکار نہیں کرسکتا لیکن جلد اور بالوں کو خوبصورت اور صحت مند بنانے کے لیے اس کی اہمیت کو کم لوگ ہی جانتے ہونگے ۔ اس مقصد کے لیے چنوں کو کئی انداز میں استعمال کیا جا سکتا ہے جن میں سے چند کی تفصیل مندرجہ ذیل ہے:چنوں میں پایا جانے والا میگنیزجلد کے خلیوں کو انرجی پیدا کرنے اور جھائیوں کے خلاف لڑنے میں مدد کرتا ہے ۔ اس میں موجود مولیب ڈینم جلد کے اندر سے سلفائیٹ کو صاف کرکے اسے ڈی ٹاکسیفائی کرتا ہے ۔ اس کے علاوہ چنوں میں وٹامن بی اور فولیٹس بھی موجود ہوتے ہیں جو کہ جلد کے لیے غذا کا کام کرتے ہیں ۔ چنوں

کے استعمال سے جلد سورج کی تیز شعاؤں کے اثرات اور نقصان دے ٹاکسنز سے بھی محفوظ رہتی ہے ۔ چنوں سے ایک بہترین فیس ماسک تیار کیا جا سکتا ہے ۔ چنے کے آٹے (بیسن)کو ہلدی اور پانی میں ملا کر پیسٹ بنا لیں ۔ اس سے چہرے کا مساج کریں ۔ یہ فیس پیک جلد کو ایکسفولئیٹ کرے گا ۔ اس سے جلد کی ساخت اچھی ہوگی ، مردہ خلیات دور ہوجائیں گے، جلد موائسچرائز ہوگی اور رنگت گوری ہو جائے گی ۔چنے کو ایک قدرتی کلینزر کے طور پر بھی ا ستعمال کر سکتے ہیں ۔ چنے کے آٹے کو ہلدی اور دودھ میں ملا کے پیسٹ سا بنا لیں ۔ اگرآپ کی جلد زیادہ خشک ہو تو دودھ کی جگہ دہی کا استعمال بھی کیا جا سکتا ہے ۔ اس پیسٹ کو چہرے پر لگا لیں ۔ دس سے پندرہ منٹ بعد چہرہ ہلکے گرم پانی سے دھو لیں ۔عمر بڑھنے کے ساتھ جلد پر کئی طرح کے داغ اور دھبے نمایاں ہونے شروع ہو جاتے ہیں ۔ انہیں دور کرنے کے لیے چنوں کا استعمال کیا جا سکتا ہے ۔ چنوں کو ابال کر مسل دیں ۔ اس میں پانی ملا کر پیسٹ بنا لیں اسے چرے پر ماسک کی طرح لگائیں۔ خشک ہوجانے پردھو لیں ۔ اس نسخے کو مستقل استعمال کرنے سے داغ جھائیاں ہلکی اور پھر

غائب ہونی شروع ہو جائیں گی ۔ اسے آپ چہرے کے علاوہ جسم کے دیگر حصے جیسے گردن، ہاتھ اور پاؤں وغیرہ پر بھی استعمال کر سکتی ہیں ۔یہ بے جان اور ڈھلکی ہوئی جلد کو بھی ٹیک کرتے ہیں ۔چنوں میں زنک اور وٹامن بی 6کثیر تعداد میں موجود ہوتا ہے جوکہ سر کی جلد اور بالوں کے لیے بے حد ضروری ہے ۔ اس سے بالوں کا پروٹین بنتا ہے جو وٹامن اے کے ساتھ مل کر بالوں کا جھڑنا روکتے ہیں اور انہیں خوبصورت بناتے ہیں ۔ غذا میں چنوں کا استعمال کرنے سے بال مضبوط ہوتے ہیں ۔ جسم میں زنک اور وٹامن بی6کی کمی سر کی خشکی کی وجہ بنتی ہے ۔ بالوں پر چنوں کا استعمال کرنے کا بہترین طریقہ اس کا پیک بنا کر بالوں پر لگانا ہے ۔ بیسن کو ایلو ویرا جیل اور لیمبو میں ملا کر بالوں پر لگائیں ایک گھنٹے بعد بال دھو لیں ۔ اس سے بال کنڈشنڈ ہو جائیں گے ۔ اگر آپ کے بال زیادہ خشک ہیں تو آپ لیمبو کی جگہ دہی کا استعمال بھی کر سکتی ہیں ۔ یا ماسک لگانے سے پہلے بالوں پر کوئی اچھا تیل بھی لگا سکتی ہیں ۔اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.