بچی کے بالوں میں اس چیز کا مساج کر یں ۔

آج میں آپ کو چھوٹی بچیوں کے بالوں کو لمبا گھنا اور مضبوط بنانے کی بہت ہی کار آمد ریمیڈی بتاؤں گی اسے چھوٹے بچوں کے لیے استعمال کر سکتے ہیں اس سے فائدہ ہر عمر کے خواتین و حضرات فائدہ اٹھا سکتے ہیں یہ ریمیڈی بالوں کو تیزی سے بڑھاتی بھی ہے اور آپ کے بالوں کے مسئلے کو بھی حل کر تی

ہے میرے خیال میں بالوں کے گرنے کے مسائل میں ہر تیسرہ شخص ملوث ہے۔ خیر ہم چلتے ہیں آج کی ریمیڈی کی طرف۔ اس ریمیڈی کو بنانا شروع کر تے ہیں تو سب سے پہلے آپ نے لینا ہے زیتون کا تیل ۔ زیتون کا تیل نہ صرف بالوں کو لمبا گھنا کر تا ہے۔ بلکہ یہ سر میں بلڈ سرکولیشن کو بڑھا کر دماغ کو بھی تیز کر تا ہے اور بالوں کو مضبوط بنا تا ہے آپ نے دو چمچ زتیون کا تیل لینا ہے۔ اب آپ نے لینا ہے آملہ پاؤڈر کسی بھی پنسار سٹور سے یہ آپ کو مل جا ئے گا یہ بالوں کو سلکی اور چمک دار بنا تا ہے۔ اور گرتے بالوں کے مسائل کو بھی حل کر تا ہے اس کا آپ نے ایک چمچ لینا ہے ۔ اب جو چیز آپ اس میں ڈالیں گے وہ ہے جنجر جوس یعنی ادرک کا رس۔ اس کے لیے ادرک کو کدو کش کر کے اس کا رس نکال لیں ادرک بالوں کی جڑوں میں بلڈ سرکولیشن بڑھاتی ہے۔ گرتے بالوں کو مضبوط بناتی

ہے خشکی سکری کا مسئلہ بھی حل کر تی ہے اور تیزی کے ساتھ ہئیر گروتھ کر تی ہے آپ نے ادرک کے رس کا بس ایک ہی چمچ لینا ہے۔ بس یہی تین چیز یں اس میں شامل ہوں گی اب اسے اچھے سے مکس کر لیں۔ جب یہ مکس ہو جا ئے تو اسے بچی یا اپنے بالوں میں لگا لیں اچھی طرح سے بالوں کی جڑوں تک لگائیں اور پانچ منٹ تک ہلکا ہلکا مساج کر یں پھر دو گھنٹے کے بعد کسی بھی ہر بل شیمپو سے سر دھو لیں ہر ایک دن چھوڑ کر آپ نے ایسا کر نا ہے یعنی ہفتے میں تین بار اس کے استعمال بال تیزی سے لمبے گھنے بھی ہوں گے اور بالوں کا گر نا بھی بند ہو جا ئے گا۔ آپ اسے میرے کہنے پر ایک بار ضرور ٹرائی کر یں۔ انشاء اللہ بالوں کے تمام مسائل حل ہو جا ئیں گے۔ جیسا کہ آج کل کے دور میں ہر کسی کی ہی خواہش ہے کہ اس کے بال جو ہیں بہت ہی اچھے ہوں بہت ہی خاص ہوں دوسروں سے بہت ہی زیادہ مختلف ہوں تو یہ جو ریمیڈی میں نے بتائی ہے اس کی مدد سےآ پ کا جو یہ خواب ہے وہ پورا ہو سکتا ہے۔ تو اس ریمیڈی کو اس فارمو لا کو لازما ً استعمال کیجئے گا تا کہ اس سے بے شمار جو فوائد ہیں وہ آپ کو حاصل ہو سکیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *