خود پر مہر بانی کر و جمعہ کے دن یہ تسبیح پڑ ھ لو

خود پر مہربانی کرو اور یہ ایک تسبیح پڑ ھ لو اتنی دولت آ جائے گی کہ لوگ پو چھیں گے بتاؤ بھائی کیا پڑ ھتے ہو؟ غیب سے رزق کے صندوق نازل ہو نگے۔ اللہ کی تعریف: “تپتی دھوپ کے اندر کھڑ ے درختوں میں رنگ دار، رس دار، خوشبو دار اور ذائقہ دار پھل بنا نا میرے رب کی قدرت نہیں تو اور کیا ہے” آج میں

آپ کی خدمت میں بہت ہی مجرب اور آ زمودہ وظیفہ لے کر حاضر ہوا ہوں۔ جس کو پڑ ھنے سے دولت کے ڈھیر لگ جاتے ہیں۔ ہر شخص دوسرے کو اپنے سامنے مرتا ہو اور دفن ہوتا ہوا دیکھتا ہے۔ اور ہم دیکھتے ہیں کہ کفن میں کوئی جیب بھی نہیں ہوتی جہاں پر دنیا کی اکٹھی کی ہوئی دولت کو انسان اپنے ساتھ لے جائے مگر اس کے باوجود ہماری حرص ختم نہیں ہوتی ہم دولت کو رشوت، حرام، جھوت اور دھو کے سے کماتے ہیں اور جب پیسہ آ نے لگتا ہے تو ہم خود کو کا میاب سمجھنے لگ جاتے ہیں ۔ یقین کر یں دولت کا آ نا اللہ کا کرم نہیں ہوتا ہم پیسوں کو گِن گِن کر رکھتے ہیں دوسروں پر خرچ نہیں کرتے۔ اس لیے قرآن ِ پاک فرقانِ حمید میں ارشاد ہے کہ تم عنقریب جان لو گے جس مال کے پیچھے حقداروں اورغریبوں کے حقوق دبائے وہ مال آ ج بر باد ہو گیا۔ ہمیشہ اللہ سے دُ عا کر نی چاہیے کہ اے ہمارے لیے جو بہتر ہے ہمیں وہ عطا فر ما اس مال سے

بچا جو ہمارے لیے حرام ہے ہمیں رزقِ حلال نصیب فر ما ۔ رزق ِ حلال نصیب ہو گا تو دنیا بھی کا میاب ہو گی اور آخرت بھی کا میابی حاصل ہوگی اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ اللہ آپ کو بے تہاشہ رزق حلال اور مال و دولت سے نواز دے تو اللہ کی ذات پر پختہ اور کا مل یقین رکھتے ہوئے ایک مرتبہ اس وظیفے پر ضرور عمل کریں۔عمل اور ضروری ہدایات: یہ وظیفہ آپ نے نمازِ فجر کے بعد کر نا ہے اور اللہ کے اسمِ اعظم “یا لطیف ، یا حفیظ ، یا حلیم” کو سو مرتبہ پڑ ھنا ہے ۔ پانچ مرتبہ دُرودِ پاک پڑ ھنا ہے آخر میں اللہ پاک سے دُعا مانگنی ہے ۔ اس عمل کو ایک روزانہ ایک دفعہ کر نا ہے۔ آپ کے پاس اتنی دولت آ جائے گی کہ سب آپ سے پو چھیں گے کہ آپ کو نسا عمل کرتے ہیں؟رزق کے صندوق بھر بھر کے آپ کے گھر آ ئیں گے۔ اللہ ہم سب کو ہماری اوقات کے مطا بق نہیں بلکہ اپنی شان کے مطا بق نعمتیں عطا فرمائے۔ وظیفہ کر نے سے پہلے کچھ نہ کچھ صدقہ و خیرات کر لیا کریں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.