نواز شریف کی وطن واپسی کا اعلان، کب آرہے ہیں؟

نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے سینئیر رہنما جاوید لطیف نے پارٹی قائد نواز شریف کی واپسی سے متعلق بڑا دعویٰ کرد یا۔ انہوں نے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے موجودہ حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ موجودہ حکومت نے ہمارے رہنماؤں اور مسلم لیگ ن کی لیڈر شپ کو خطرے

میں ڈالا، مسلم لیگ ن کی لیڈر شپ کو آج جو خطرات لاحق ہیں وہ سب آپ کے سامنے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں دو دن قبل ہو کر آیا ہوں، مجھے وہاں بلاول بھٹو اور اُن کی سیکنڈ لیڈر شپ سے ملاقات کرنے اور بات کرنے کا موقع ملا ، میں نے دیکھا ہے کہ قطعاً اس حوالے سے کوئی ابہام نہیں ہے۔ پی ڈی ایم جو فیصلہ کرے گی پاکستان پیپلز پارٹی من و عن اُس پر عمل کرے گی۔ اور اگر حکومت وقت کا کوئی ساتھی ، حامی یا کوئی طاقتور شخص یہ سمجھتا ہے کہ نواز شریف کے پاکستان واپس آنے سے یہ تحریک منطقی انجام تک پہنچ سکتی ہے تو میں نے ذکر کیا تھا کہ نواز شریف نے 1993ء سے اداروں کو اپنی حدود میں رہ کر کام کرنے کا کہا اور ایسا انہوں نے بارہا کیا۔ آج پاکستان اگر مشکل میں ہو اور پاکستانی قوم بھنور میں پھنسی ہواور نواز شریف کو اگر یہ یقین ہو جائے کہ میرے پاکستان واپس جائے بغیر ملک اس بھنور سے نہیں نکل سکتا تو میں آپ کو کہہ رہا ہوں کہ ایسے میں پوری جماعت اور پورا شریف خاندان بھی اُن کو روکنا چاہے تو وہ نہیں رکیں گے ، وہ پاکستان کو اس مشکل سے نکالنے کے لیے خود پاکستان آ جائے گا۔ جاوید لطیف نے کہا کہ جس نواز شریف کو میں اور یہ پوری قوم جانتی ہے وہ اپنی بیماری پر کمپرومائز کر لے گا لیکن وہ پاکستان پر کبھی کمپرومائز نہیں کرے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.