تعلیم پر سمجھوتہ نہیں کر سکتے۔۔ حکومت نے سکولوں کی چھٹیاں کم کردیں ۔۔ طلبہ اور والدین کے لیے بڑی خبر

پشاور(ویب ڈیسک) تعلیم پر سمجھوتہ نہیں کر سکتے۔۔ حکومت نے سکولوں کی چھٹیاں کم کر دیں ۔۔ طلبہ اور والدین کے لیے بڑی خبر آ گئی۔ صوبائی حکومت کی طرف سے یہ فیصلہ کورونا وبا کے پیش نظر ہونے والی مستقل چھٹیوں کی وجہ سے کیا گیا ہے تاکہ طالب علموں کا مزید تعلیمی نقصان ہونے سے بچ سکے۔ خیبر پختونخواہ حکومت نے

سرکاری ونجی اسکولوں میں موسم سرما کی تعطیلات کم کردیں۔خیبر پختونخواہ حکومت نے پہاڑی علاقوں کے سرکاری ونجی اسکولوں میں موسم سرما کی تعطیلات 28 فروری سے کم کر کے 31جنوری کر دیں۔ عام طور پر پہاڑی سرد ترین علاقوں میں خیبر پختونخواہ حکومت نے بچوں کو حیران کر دیا۔ ہر سال یہ تعطیلات 24 دسمبر سے 28 یا 29 فروری تک ہوا کرتی ہیں صوبائی حکومت کی طرف سے یہ فیصلہ کورونا وبا کے پیش نظر ہونے والی مستقل چھٹیوں کی وجہ سے کیا گیا ہے تاکہ طالب علموں کا مزید تعلیمی نقصان ہونے سے بچ سکے۔ دوسری جانب لندن(نیوز ڈیسک)برطانیہ میں کورونا وائرس کے تیزی سے پھیلاؤ کا ذمہ دار اسکولوں کو قرار دے دیا گیا۔غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق برطانوی محکمہ صحت کی جاری کردہ رپورٹ کے مطابق اکتوبر کے بعد سے اسکولوں میں کورونا وائرس کی وبا تیزی سے پھیلی اور اسکولوں کو تین گنا زیادہ کورونا وائرس پھیلنے کا ذمہ دار قرار دے دیا گیا۔رپورٹ کے مطابق سال 2020 کے آخری تین مہینوں کے دوران اسکولوں میں عالمی وبا کا پھیلاؤ سب سے تیز رہا جس کی شرح 26 فیصد تھی۔ماہرین نے کہا ہے کہ برطانیہ میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اسکولوں کو بند کیا جانا چاہیے کیونکہ اسکولوں کو بند کیے بغیر کورونا وبا پر قابو پانا مشکل ہو گا۔ایک بار پھر تیزی سے کورونا وائرس کی نئی قسم کے پھیلاؤ کے باعث برطانوی وزیر اعظم نے آج سے تمام تعلیمی اداروں کو بند رکھنے کا اعلان کر دیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ سال دسمبر میں برطانیہ کے تعلیمی اداروں میں کورونا کی وبا تیزی سے پھیلی جس کی شرح 26 فیصد تھی تاہم جب کرسمس کے موقع پر تعلیمی اداروں کو بند کیا گیا تو یہ شرح گھٹ کر 10 فیصد پر آ گئی۔برطانوی وزیر اعظم نے برطانیہ میں ایک بار پھر مکمل لاک ڈاؤن کا اعلان کر دیا ہے اور شہریوں کو گھروں سے نہ نکلنے کی ہدایت کی گئی ہے۔واضح رہے کہ برطانیہ میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ میں انتہائی تیزی آ گئی ہے اور گزشتہ ایک ہفتے کے دوران روزانہ 50 ہزار سے زائد کیسز رپورٹ ہو رہے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *