استعفیٰ نہیں ملے گا اسمبلیاں تحلیل ۔۔! وزیر اعظم عمران خان کیا کرنے جا رہے ہیں ؟ ملکی سیاست میں مچانے والی خبر آگئی

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان نے اپنی ٹیم کو بتادیا ہے کہ وہ کسی صورت استعفیٰ نہیں دیں گے ، اگر ضرورت پڑی تو اسمبلیاں توڑ دی جائیں گی ، یہ انکشاف سینئر تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود نے کیا۔تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتےہوئے انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کی طرف سے اپنی

پوری ٹیم کو بتادیا گیا ہے کہ وہ کسی صورت بھی استعفیٰ نہیں دیں گے بلکہ اس کی بجائے اسمبلی تحلیل کردی جائیں گی کیوں کہ وزیر اعظم عمران خان کسی بھی ’ان ہاؤس‘ تبدیلی کے لیے بھی رضامند نہیں ہیں اس سلسلے میں حکمراں جماعت پاکستان تحریک انصاف کے اندر بھی وہ شخصیات جو کہ مائنس ون کے بعد آنے کا سوچ رہی تھیں ان سب کو وزیراعظم عمران خان نے اسمبلی میں کھڑے ہوکر بتا دیا تھا کہ ان کی جگہ کسی کو نہیں لایاجا سکتا۔ ڈاکٹر شاہد مسعود کے مطابق پاکستان تحریک انصاف صرف عمران خان ہیں ، پاکستان مسلم لیگ ن کی پارٹی بھی اکیلے سابق وزیراعظم نواز شریف ہی ہیں لیکن وہاں فرق صرف یہ ہے کہ نواز شریف کے ساتھ ان کی مضبوط ٹیم ہے جو گزشتہ کئی برسوں سے ان کے ساتھ موجود ہے۔ خیال رہے کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ نے 31 جنوری تک حکومت کو مستعفی ہونے کی ڈیڈلائن دے دی، صدر پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اگر حکومت مستعفی نہ ہوئی توپھریکم فروری کو اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کا اعلان کیا جائے گا،31 دسمبر تک پی ڈی ایم کے ارکان قومی و صوبائی اسمبلی اپنے استعفے پارٹی قائدین کوجمع کروادیں گے تفصیلات کے مطابق صدر پی ڈی ایم نے مریم نوازاور بلاول بھٹو ودیگر رہنماؤں کے ہمراہ پی ڈی ایم اجلاس کے بعد مشترکہ میڈیا بریفنگ میں کہا کہ پہلی بات یہ ہے کہ 31 دسمبر تک پی ڈی ایم کے ارکان قومی و صوبائی اسمبلی اپنے استعفے اپنی اپنی جماعت کے قائدین کو پیش کردیں گے ، حکومت کو واضح کردینا چاہتے ہیں 31 جنوری تک حکومت مستعفی ہوجائے، اگر مستعفی نہیں ہوئی تو پھر سربراہی اجلاس میں یکم فروری کو اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کا اعلان کردے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.