سر : ایک نیا لڑکا خانزادہ آیا ہے ، یقین کریں یہ آپ کو خوش کر دے گا ۔۔۔۔۔۔ شاہ زیب خانزادہ کے بارے میں آج سے کچھ عرصہ قبل یہ بات کس نے کسے کہی تھی ؟ حیران کن انکشاف

لاہور (ویب ڈیسک) قومی مفاد اور انسانی حقوق میں ایک نوع کا توازن بھی ضروری ہے۔ کسی بھی ملک میں قومی مفادیعنی National Interest کو اس قدر حاوی نہیں ہونا چاہیے کہ وہ انسانیت کے مقابل کھڑے ہو جائیں۔ جیسے کہ ہم دیکھتے ہیں آمرانہ حکومتوں میں، چاہے وہ عسکری اسٹیٹ کی ظالمانہ صورت میں ہوں، نامور کالم نگار افضل ریحان اپنے ایک

کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاہی استبداد کے نیچے دبی ہوں ، کمیونسٹ جبر کے زیر اثر ہوں یا پھر کمزور جمہوریتوں کی صورت کام کر رہی ہوں، قومی مفادات کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا جاتا ہے، چاہے انسانیت اس کے بوجھ تلے سسکتی رہے۔ دوسری جانب ہیومن رائٹس کے نعرے لگاتے ہوئے بھی کسی ملک کے اقتدار اعلیٰ کی پاسداری میں اس کے نیشنل انٹرسٹ کی ایک حد تک لحاظ داری یا پاسداری سے انکار کسی صورت نہیں کیا جا سکتا۔ ہر صحافی یا اینکر پرسن کو اس حساس فیلڈ میں داخل ہوتے ہی اس بات کا حلف اٹھانا چاہیے کہ اول میرے سامنے سچائی سے مقدس کوئی چیز نہیں ہو گی۔ دوم کچھ بھی ہو جائے میں مظلوم کا ساتھی و سہارا بنوں گا، چاہے وہ کسی بھی رنگ و نسل، زبان یا مذہب و عقیدے کا حامل ہو۔سوئم میں جس قدر سوسائٹی کے دبے ہوئے کمزور طبقات کا ساتھ دوں گا اس لگن اور جذبے کے ساتھ حاوی یا زورآور طبقے کے سامنے سٹینڈ بھی لوں گا یا اس کی پوری ایمانداری سے کوشش کروں گا۔ آج اپنے ایک پسندیدہ اینکر پرسن کو سپاسنامہ پیش کرنے کیلئے قلم اٹھایا تھا لیکن بات دوسری طرف چلی گئی درویش نے اگر دی بیسٹ اینکر پرسن کا ایوارڈ دینا ہو تو وہ بلاتامل شاہ زیب خانزادہ کا نام لے گا جو اتنے اعتماد اور تیاری کے ساتھ اپنا پروگرام پیش کرنے آتے ہیں کہ دیگر نوجوان اینکرز کو ان سے سیکھنا چاہیے۔ ابھی اس نوجوان کے صرف دو ہی پروگرام دیکھے تھے کہ شامی صاحب کے دفتر میں میر صاحب سے پرسکون ملاقات کا موقع مل گیا اور یہ بھانپتے ہوئے کہ میر صاحب کامران خان کے جانے سے کچھ افسردہ ہیں عرض کی میر صاحب یہ جو نیا لڑکا خانزادہ آپ لائے ہیں۔ ناچیز نے اس کا پروگرام دیکھا ہےاوراس کے اندر اتنی صلاحیت محسوس کی ہے کہ مستقبل میں آپ خوش ہو جائیں گے۔ آپ کے پروگرام کو یہ نوجوان کامران خان کے پروگرام سے اوپر لے جائے گا۔ الحمدللہ آج گنہگار کو خوشی ہے کہ اس کی پرکھ درست تھی ،کیونکہ اگر قومی سطح پر سروے کروایا جائے تو یہی رزلٹ نکلے گا ان کا پروگرام کیوں اور کیسے اتنا موثر ہے؟ یہ بحث آئندہ سہی۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *