پاکستانی ڈاکٹر کو اعلیٰ ایوارڈ سے نواز دیا

دُبئی(4دسمبر2020ء) پاکستانی ڈاکٹر محمد عثمان جو امارات میں کئی سالوں سے پیشہ ورانہ ذمہ داریاں انجام دے رہے تھے، 15 مئی کو کورونا کے مرض کے ہاتھوں و-فات پا گئے تھے۔ اماراتی حکومت نے ان کی شاندار خدمات کا اعتراف کرتے ہوئے انہیں شہید اور مقامی ہیرو کا درجہ دینے کے علاوہ یومِ شہداء پر اعلیٰ ترین ایوارڈ ’آرڈر آف دی فالن فرنٹ ہیروز“ سے بھی نواز ا گیا

ہے۔یہ ایوارڈ ان کی بیوہ نے وصول کیا۔ آزاد کشمیر کے علاقے راولا کوٹ سے تعلق رکھنے والے مرحوم ڈاکٹر محمد عثمان گیارہ سال سے امارات کے ایک پرائیویٹ ہسپتال میں خدمات نبھانے کے بعد2019ء میں ابوظبی میں ایک چھوٹے سے کلینک میں مزدور طبقے کے مریضوں کا علاج کرتے تھے۔ اسی دوران ہی انہیں کورونا ہواجو ان کی جان لے گیا۔یو اے ای کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے یوم شہداء کے موقع پر مرحوم ڈاکٹر محمد عثمان کو”آرڈر آف دی فالن فرنٹ لائن ہیروز“ سے نواز دیا ہے۔مرحوم ڈاکٹر محمد عثمان کے علاوزہ مزید چھ افراد کوان کی موت کے بعد امارات کے لیے اعلیٰ خدمات کے صلے اور اعتراف میں اس ایوارڈ سے نوازا گیا ہے۔ ابوظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید نے مرحومین کے اہل خانہ کو یہ ایوارڈ پیش کرنے کے لیے ایک تقریب کا انعقاد کیا جس میں انہوں نے امارات کی خاطرناقابل فراموش خدمات اور جانوں کا نذرانہ دینے پر مرحومین کے اہل خانہ کا شکریہ ادا کیا۔ڈاکٹر محمد عثمان کی بیوہ عالیہ عثمان نے بتایاکہ انہیں جب ابوظبی کے ولی عہد کی جانب سے کال آئی تو پہلے پہلے یقین ہی نہ ہو سکا کہ وہ مجھ سے بات کر سکتے ہیں۔ تاہم انہوں نے اس کال کے دوران میرے مرحوم شوہرخدمات کو سراہتے ہوئے بتایا کہ انہیں اماراتی حکومت نے شہید کا درجہ دے کر اعلیٰ ترین اعزاز سے نواز دیا ہے ۔ مجھے ولی عہد نے یہ بھی بتایا کہ میرے اور بچوں کے ویزوں کی مُدت میں بھی توسیع ہوتی رہے گی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.