29 دسمبر کو دھرنے کا اعلان کر دیا گیا

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) پنجاب ٹیچر یونین کی جانب سے انتیس دسمبر کو دھرنے کا اعلان کر دیا گیا ، یہ دھرنا وزیر اعلیٰ ہاؤس کے سامنے دیا جائے گا ۔ تفصیلات کے مطابق انتیس دسمبر کو پنجاب یونین ٹیچرز کی جانب سے وزیر اعلیٰ ہاؤس کے سامنے دھرنے کا اعلان کر دیا گیا ۔ پنجاب یونین ٹیچرز کے صدر کا کہنا ہے

کہ ملک میں کورونا وبا کے دوران بی ایڈ تیچرز کو نوکریوں سے نکالا جا رہا ہے، ہمارا مطالبہ یہ ہے کہ حکومت اس سمری کو منظور کر لے جو محکمہ تعلیم کی جانب سے ارسال کی گئی ہے، تمام اساتذہ کا سی ایم پیکج بحال کیا جائے۔ صدر پنجاب یونین ٹیچرز کا کہنا تھا کہ اساتذہ کی نوکریوں کی اپ گریڈیشن وقت کا تقاضا ہے، تمام کیڈرز اساتذہ کو ایک سیلری کے مطابق الاؤنس دیا جائے اس کے علاوہ عدالت کے اس فیصلے پر بھی عمل کیا جائے جو ببے اینڈ سروس پروٹیکشن کے حوالے سے کیا گیا ہے۔ جبکہ دوسری جانب قومی احتساب بیورو کا سربراہ جمعیت علمائے اسلام مولانا فضل الرحما ن کو نوٹس کا دعویٰ، جمعیت نے اس دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ فی الحال کوئی نوٹس نہیں ملا، اگر مل بھی گیا تو اس نوٹس کی اہمیت ردی کے علاوہ کچھ نہیں ہوگی۔ تفصیلات کے مطابق ترجمان جو یو آئی اسلم غوری کا کہنا ہے کہ نیب یہ دھمکیاں کسی اور کو دے، جن لوگوں نے نا اہل حکمرانوں کو ہم پر مسلط کیا ہے ان کے خلاف تحریک کو جاری رکھیں گے، اس طرح کے بھونڈے اقدامات سے ہمیں ڈرایا دھمکایا نہیں جاسکتا، نیب کی جانب سے تاحال کوئی بھی نوٹس ہا پھر سوالنامہ موصول نہیں ہوا اور اگر ہو بھی گیا تو اسکی اہمیت محض ردی کی ہوگی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.