چین کا سب سے بڑا معاشی معاہدے

چین نے سب سے بڑے معاشی معاہدے سے امریکا اور بھارت کو نکال دیا
آج اس معاہدے پر دستخط ہوگئے ،اس معاہدے کا نام آر سی ای پی ہے، یہ سابق امریکی صدراوباما کا آئیڈیا تھا کہ اس میں بھارت اور دوسرے ممالک کو بھی شامل کیا جائے۔ سینئر تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود

لاہور(15 نومبر2020ء) چین نے دنیا کے سب سے بڑے تجارتی و معاشی معاہدے سے امریکا اور بھارت کو نکال دیا ہے، سینئر تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ اس معاہدے کا نام آر سی ای پی ہے، یہ سابق امریکی صدراوباما کا آئیڈیا تھا کہ اس میں بھارت اور دوسرے ممالک کو بھی شامل کیا جائے۔انہوں نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں اپنے تبصرے میں کہا کہ چین نے دنیا کے سب سے بڑے تجارتی و معاشی معاہدے سے امریکا اور بھارت کو نکال دیا ہے، اس معاہدے کا نام آر سی ای پی ہے، ایشیاء پیسفک کنڑیز اوباما کا آئیڈیا تھا، کہ اس میں بھارت اور دوسرے ممالک کو بھی شامل کیا جائے۔لیکن آج اس معاہدے پر دستخط ہوگئے ہیں، اس معاہدے میں سے چین نے امریکا اور بھارت دونوں ممالک کو نکال دیا ہے۔اب پتا نہیں وہ خود چھوڑ گئے یا نکال دیے گئے۔دوسری جانب برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کے مطابق دنیا کے 15 ممالک نے مل کر دنیا کا سب سے بڑا تجارتی اتحاد قائم کیا ہے جو عالمی معیشت کا تقریباً ایک تہائی حصہ بنتا ہے۔ ریجنل کامپری ہینسو اکنامک پارٹنرشپ (آر سی ای پی) میں جنوبی کوریا، چین، جاپان، آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ سمیت 10 جنوب مشرقی ایشیائی ممالک شامل ہے۔اس معاہدے کو چین کے خطے میں بڑھتے اثر و رسوخ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ اس معاہدے میں امریکہ کو شامل نہیں کیا گیا جس نے سنہ 2017 میں ایک مخالف ایشیا پیسیفک تجارتی معاہدے سے دستبرداری کا اعلان کیا تھا۔ بی بی سی اردو نے یہ بھی بتایا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 2016 میں جب منصب سنبھالا تو کچھ ہی عرصے بعد ٹرانس پیسیفک پارٹنرشپ سے دستبرداری کا فیصلہ کیا تھا۔ اس معاہدے میں 12 ممالک شامل تھے اور اسے سابق امریکی صدر براک اوباما کی حمایت حاصل تھی اور وہ اس کے ذریعے چین کی خطے میں بڑھتی طاقت کا مقابلہ کرنا چاہتے تھے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *