نواز شریف وزٹ ویزے پر لندن گئے۔۔۔ فواد چوہدری نے لائیو پروگرام میں حیران کُن انکشاف کردیا

لاہور (ویب ڈیسک) ارشاد احمد عارف نے کہا ہے ایاز صادق کے بیان والے ایشو پر ن لیگ کے اندر اگر واضح تقسیم نہ ہو تو پھر تعجب کی بات ہے ۔

وہ شخص مسلم لیگی ہی نہیں ہے جو اپنے دل میں انڈیا کی محبت پالتا ہو اور انڈیا سے نفرت نہ کرتا ہو۔مسلم لیگی جیسا بھی ہواس کا پاکستان ، فوج ،پاکستان کی سلامتی اور انڈیا کے حوالے سے ایک مزاج ہے ۔پروگرام کراس ٹاک میں اینکر پرسن اسد اللہ خان سے گفتگو میں انہوں نے کہاقائد اعظمؒ کے فرامین ،اقبالؒ کی سوچ سے انحراف کرکے کوئی اصلی نہیں جعلی مسلم لیگی ہوسکتا ہے ،اگر نوازشریف عبد الصمد اچکزئی کی برسی کی تقریب میں نہ جاتے تو بلوچستان میں جو مسلم لیگ کی حکومت ختم ہوئی وہ ختم نہیں ہونی تھی۔

یہ جنرل عاصم کا نام لیتے رہے ہیں،میری اطلاع یہ ہے کہ اس وقت جنرل باجوہ اپنی والدہ کی عیادت کیلئے امریکا میں تھے مگر یہ الزام ان پر ہی لگاتے رہتے ہیں،عبد القادر بلوچ بلوچ سمیت کئی لوگ ن لیگ سے پیچھے ہٹ رہے ہیں،ایاز صادق نے اب سٹینڈ لینے کی بات کی ہے ، ہوسکتا ہے یہ نوازشریف کی طرف سے شاباش کی وجہ سے ہو، پاکستان نے بھارت کا غرور مٹی میں ملایا،یہ سپہ سالار کو نشانہ بنارہے اور کہتے ہیں کہ ہم فوج کے خادم ہیں۔

کیا سپہ سالار کے بغیر کسی فوج کا تصور ہے ۔وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا نوازشریف کو واپس لانا اس لئے مشکل نہیں ہے کیونکہ وہ لیگل ویزے پر نہیں وزٹ ویزے پر ہیں،وہ باہر قانونی طریقے سے نہیں رہ رہے ، ویزہ بھی عدالتی فیصلے کی بنیاد پر ملا تھا،15جنوری تک نوازشریف کو واپس لے آنا چاہئے ،ایاز صادق میں ذرا بھی سمجھ ہوتی تو فوری طور پر معذرت کرتے ۔

ممبر برطانوی پارلیمنٹ ڈاکٹر افضل خان نے کہابرطانوی گورنمنٹ دیکھے گی کہ نواز شریف کا علاج مکمل ہوگیا ہے یا نہیں،یہ چانسز زیادہ ہیں ان کو اجازت دی جائے گی کہ وہ اپنا علاج مکمل کریں،پاکستان کی عدالتیں جو مرضی کہتی رہیں مگر صورتحال کو برطانیہ کے قانون کے مطابق دیکھا جائے گا۔ماہر قانون اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے کہااس وقت نوازشریف ضمانت پر نہیں اوراسلام آباد ہائیکورٹ اور لاہور ہائیکورٹ کے آرڈرز کی خلاف ورزی ہورہی ہے ،حکومت انٹر پول سے رابطہ کرسکتی ہے ۔ن لیگ کے رہنما طلال چودھری نے کہاہر سمجھدار آدمی جانتا ہے یہ ن لیگ کی حکومت کے خلاف کمپین ہے ،ایسی کمپین پہلے بھی چلتی رہی،ایاز صادق کی بات کو گھسیٹ کر لمبا کرنے سے اچھا تاثر نہیں جارہا، انہوں نے اپنے بیان کی وضاحت کردی ہے ،اب مزید بات کرنے کی کیا ضرورت ہے ، فوج سب کی ہے ۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.