آپ کی موٹرسائیکل چوری ہوئی ہے تو کہاں سے ملے گی؟چھینی یا چوری کی گئی موٹرسائیکلوں کا بازار کہاں لگتا ہے؟ اہم انکشافات

کراچی(نیوز ڈیسک)اینٹی وہیکل لفٹنگ سیل ( اے وی ایل سی) حکام نے انکشاف کیا ہے کہ کراچی سے چھیننی اور چوری ہونے والی موٹرسائیکلوں کا بازار بلوچستان کے ضلع خضدار میں ہے۔اے وی ایل سی کے سامنے یہ انکشافات گرفتار عادی ملزم غلام علی نے کیے جو موٹر سائیکل لفٹنگ میں کئی بار

گرفتار ہوکر پہلے بھی جیل جا چکا ہے۔حکام کا بتانا ہے کہ ملزم چوری اور چھینی گئی موٹر سائیکلوں سے حاصل رقم سے اپنا پلاٹ بھی خرید چکا ہے اور اسی رقم سے وکیلوں کو فیس کی ادائیگی بھی کرتا ہے۔حکام کے مطابق یہ موٹرسائیکلیں انجن یا چیچز نمبر تبدیل کر کے یا اسمگلنگ کے ذریعے حب اور نورانی میں واقع گروپوں کو پہنچائی جاتی جاتی ہیں جو انھیں خضدار لے جاتے ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ جاپانی 125 موٹر سائیکل 40 سے 45 ہزار روپے، سی ڈی 70 موٹر سائیکل 20 سے 25 ہزار روپے جب کہ چائینیز موٹر سائیکل اس بازار میں 13 سے 15 ہزار روپے میں بکتی ہے۔ حکام کے مطابق موٹرسائیکلیں خریدنے والے گروہ حب اور نورانی میں ہیں، کراچی سے زیادہ تر موٹر سائیکلیں انجن اور چیچز نمبر پنچ کرکے بھجوائی جاتی ہیں، جو یہ گروہ خضدار پہنچاتے ہیں۔ جاپانی 125 موٹر سائیکل چالیس سے پنتالیس ہزار روپے، سی ڈی 70 موٹر سائیکل بیس سے پچیس ہزار روپے جب کہ چائینیز موٹر سائیکل اس بازار میں تیرہ سے پندرہ ہزار روپے میں بکتی ہے۔آپ کی موٹرسائیکل چوری ہوئی ہے تو کہاں سے ملے گی؟چھینی یا چوری کی گئی موٹرسائیکلوں کا بازار کہاں لگتا ہے؟ اہم انکشافات

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.