وزیراعظم عمران خان پاک فوج اور آئی ایس آئی کو کس کام کے لیے استعمال کرنا چاہتے ہیں ؟ بڑا دعویٰ کر دیا گیا

کوئٹہ(ویب ڈیسک)پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان پاک فوج ،آئی ایس آئی اور عدلیہ کو ٹائیگرو فورس بنانا چاہتے ہیں ،ہم ایسا ہر گز نہیں ہونے دیں گے ۔ان کا کہنا تھا کہ پورے ملک کی عوام اب آزادی چاہتی ہے ،ہمیں جمہوری آزادی ،غربت ،بے روزگاری ،بھوک ،سوچ

اور بولنے کی آزادی چاہیے ،یہ کیسی آزادی ہے جس میں نہ عوام ،نہ سیاستدان ،نہ عدلیہ اور نہ میڈ یا آزاد ہے ۔کوئٹہ میں پی ڈی ایم کے جلسے سے ویڈیو لنک پر خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جو لوگ کہتے تھے کہ گوجرانوالہ میں پی ڈی ایم شادی ہال نہیں بھر سکتی،انہوں نے دیکھا کہ ہم نے سٹیڈیم بھر دیا ،پھر کراچی جلسہ ناکام ہونے کی باتیں ہوئیں لیکن وہاں تاریخی جلسہ ہوا اور آج کوئٹہ جلسہ کامیاب کر کے عوام نے پیغام دے دیا کہ اس ملک کی عوام ایک طرف اور سلیکٹڈ حکومت دوسری طرف ہے ۔بلاول بھٹو نے استفسار کیا کہ اس ملک کے سب سے بڑے اور وسائل سے مالا مال صوبے کی عوام غریب کیوں ہے ،بلوچستان کے عوام غیرت مند ہیں اور اپنا حقوق لینا جانتے ہیں ،یہ لوگ اپنا خون دے کر حقوق لینا جانتے ہیں ۔سابق صدر مشرف پر تنقید کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آمر پرویز مشرف نے اس ملک کے شہریوں کو اغواکر کے دوسرے ملک کو بیچا ،اس سے بڑی کوئی غداری نہیں ،جس شخص نے اکبر بگٹی کو شہید کیا ،جس نے بے نظیر بھٹو کودہشت گردوں کا سہولت کار بن کر شہید کرایا ،آج تک اس سے حساب نہیں لیا جا سکا۔چیئر مین پیپلز پارٹی نے کہاکہ پاکستان میں سی پیک گلگت بلتستان اور گوادر کی وجہ سے آیا لیکن ہم نے وہاں کی عوام کا شکریہ ادا نہیں کیا ،گلگت بلتستان اور گوادر کی عوام کو کیوں محسوس ہو رہا ہے کہ سی پیک سے انہیں کوئی فائدہ نہیں ،سی پیک کو کامیاب کرنے کے لیے انہیں ترجیح دینا ہو گی ۔سلیکٹڈ عمران خان نے سی پیک کو کیاکامیاب کرنا تھا ،وہ تو الٹا سی پیک کو ناکا م بنانے کی سازش کر رہے ہیں ،عمران خان نے بلوچستان کو ایک منصوبہ نہیں دیا بلکہ الٹا صوبے کے آئی لینڈز پر قبضہ کرلیا ۔ان کا کہنا تھا کہ موجودہ دور حکومت میں مہنگائی میں ریکارڈ اضافہ ہوا ،مہنگائی کا سارا بوجھ عام آدمی پر ہے ۔ان کاکہنا تھا کہ ملک کے ہر شہر اور صوبے سے لوگ لاپتہ ہو رہے ہیں ،اس پر نہ میڈ یا بولتا ہے نہ عدلیہ انصاف دلا سکتی ہے اور نہ ہی پارلیمان کچھ کر سکتا ہے ،یہ ظلم ختم ہونا ہو گا ،گوانتا ناموبے میں اتنے لوگ نہیں مرے جتنے نیب کی گرفتاری میں ہلاک ہوئے ،عدالت نے نیب کو غیر جمہوری ادارہ قرار دیا لیکن اسی عدالیہ نے نیب کے کیسز روزانہ کی بنیاد پر سننے کی بات کی ،امید ہے کہ سپریم کورٹ کی جانب سے ایسا ہی حکم لاپتہ افراد کے کیس میں بھی آئے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.