ضرورت پڑی تو چین اور پاکستان ملکر بھارت پر چڑھائی کردیں گے یا نہیں ؟ حکومت پاکستان کا واضح اور دنگ کر ڈالنے والا اعلان

لاہور(ویب ڈیسک)بھارتی وزیر دفاع نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ پاکستان اور چین ملک کر ہم پرہمیں نقصان پہچانے کے بارے میں سوچ رہے ہیں ۔اس سلسلے میں پاکستان کی جانب سے ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ نے بھارتی وزیر دفاع کے پڑوسی ممالک سے متعلق بیان کو مسترد کر دیا۔ترجمان

دفتر خارجہ زاہد حفیظ چودھری نے کہا ہے کہ بھارتی وزیر دفاع راج ناتھ نے پاکستان اور چین پر سرحدی تنازعات کا الزام لگایا تھا۔نجی نیوز چینل کے مطابق انہوں نے کہا کہ بھارتی وزیر دفاع کا بیان آرایس ایس، بی جے پی حکومت کے بیانیےکا ثبوت دیتا ہے، یہ بھی ہندوستانی حکومت کے پاکستان کے ساتھ ناقابل برداشت جنون کا ایک اور مظہر ہے۔ترجمان دفترخارجہ زاہد حفیظ نے کہا کہ دنیاجانتی ہے کہ آر ایس ایس ایس اور بی جے پی خطے کا امن تباہ کررہی ہیں۔ ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ یہ بھارت ہی ہے جو پڑوسیوں کیساتھ تنازعات پیداکرتا ہے، بھارت تنازعات پیدا کر کےانھیں حل کرنے سے بھی بھاگ جاتا ہے، بھارت کو تنازعات پیدا کرنےکا اپنا ایجنڈا ترک کرنا ہوگا اور بھارت کو پڑوسیوں سے تنازعات کے حل کیلئے سنجیدگی دکھانی چاہیے۔ واضح رہے کہ بھارتی وزیر دفاع راج ناتھ نے پاکستان اور چین پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان اور چین مل کر بھارتی سرحد پر حالات خراب کرنا چاہتے ہیں اس لیے دونوں جانب سے سرحد پر تنازعہ پیدا کیا جا رہا ہے۔زاہد حفیظ چودھری کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان پاک چین دوستی کے خلاف بھارت کے بدنیتی پر مبنی پروپیگنڈے کی مذمت کرتا ہے۔ دوسری طرف ایک خبر کے مطابق ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ہیومن رائٹس واچ کی تازہ ترین رپورٹ نے بھارت کے غیر قانونی زیر تسلط جموں وکشمیر میں بھارتی مظالم اور بھارت میں اقلیتوں کے ساتھ روا رکھے جانےوالے امتیازی رویے کو بے نقاب کر دیا ہے۔ریڈیو پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے دفتر خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ چودھری نے کہا کہ بھارت کے غیر قانونی زیر قبضہ جموں وکشمیر میں صورتحال دن بدن ابتر ہوتی جا رہی ہے اور گزشتہ سال پانچ اگست کے بعد سے بھارتی فوج کشمیریوں کےخلاف ہرظالمانہ ہتھکنڈا استعمال کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے بھارت میں اپنے دفاتر بند کر دئیے ہیں، اس لئے یہ کہنے کا کوئی حق نہیں ہے کہ ایمنسٹی انٹر نیشنل کشمیر کے تنازع کا نوٹس نہیں لے رہی۔ان کا کہنا تھا کہ غیر قانونی زیر قبضہ جموں وکشمیر میں بھارت کی گرفت کمزور ہو رہی ہے اور مقبوضہ وادی میں اس کی پالیسیاں مکمل ناکام ہو چکی ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *