بریکنگ نیوز: اگلے دوماہ انتہائی اہم ، وزیراعظم عمران خان نے قوم کو پیشگی آگاہ کر دیا

لاہور(ویب ڈیسک)وزیر اعظم عمران خان نے کورونا وائرس کے کیسز میں بتدریج اضافے پر خبردار کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ 2 ماہ احتیاط سے گزارنا ہوں گے۔لاہور میں ایوان اقبال میں انصاف ڈاکٹرز فورم سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ خوف ہے کہ کورونا وائرس میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان

میں کورونا کے خلاف حکومتی اقدامات کو دنیا بھر نے تسلیم کیا لیکن اب ہمارے لوگوں نے کورونا کو نظر انداز کرنا شروع کردیا جس کی وجہ سے کیسز میں اضافہ ہورہا ہے۔علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان کے سرکاری اداروں بشمول ہسپتال اور تعلیمی اداروں کو 70 کی دہائی میں قومی تحویل میں لینے سے غیرمعمولی نقصان پہنچا۔عمران خان نے کہا کہ والدہ کو کینسر ہوا تک احساس ہوا کہ سرکاری ہسپتالوں کی ابتر حالت ہے اور اس کی بنیادی وجہ نیشنلائزیشن تھی۔انہوں نے کہا کہ جس نظام میں سزا و جزا ختم ہو جائے تو ادھر معیار تنزلی سے دوچار ہوتا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ حکومت کو 26 ماہ ہوئے ہیں اور لوگ سوال کرتے ہیں کہ نیا پاکستان کدھر ہے؟ میں ان کو سمجھا کر تھک گیا ہوں کہ تبدیلی کا نام اداروں کی اصلاحات ہیں جس میں وقت درکار ہوتا ہے۔عمران خان نے کہا کہ اس سے قبل تمام حکومتوں نے اپنے مفاد کو مدنظر رکھا اور اب انہیں کھانسی ہوتی تو علاج کے لیے بیرون ملک روانہ ہوجاتے ہیں لیکن غریب یا عام شخص کیا کرے۔انہوں نے کہا کہ جب عام شخص کی زندگی بہتر ہوتی ہے تو سب اس کے ساتھ کھڑے ہوتے ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے اپوزیشن اتحاد کا نام لیے بغیر کہا کہ ‘سارے جیب کترے ایک اسٹیج پر کھڑے ہو کر شور مچاتے ہیں کہ ملک تباہ ہوگیا، ان کو پہلی مرتبہ اپنے احتساب ہونے کا خوف ستا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ‘(اپوزیشن اتحاد) جو مرضی آئے کچھ کر لے لیکن ایسا وزیراعظم ہے جو بلیک میل نہیں ہوگا’۔عمران خان نے کہا کہ ان کا ہر حال میں احتساب کرنا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ 30 سال سے حکومت کرنے والے اب اس طرح جمع ہوگئے جیسے ہسپتال میں ایک گروپ جمع ہوجاتا ہے جو طبی مرکز میں اصلاحات نہیں چاہتا۔انہوں نے کہا کہ چھوٹے چھوٹے مافیازتبدیلی نہیں آنے دے رہے لیکن واضح کردوں کہ تمام سرکاری ہسپتال میں اصلاحات لائیں گے اور اصلاحات آہستہ آہستہ آئیں گی۔ان کا کہنا تھا کہ جن کے مفادات متاثر ہوں گے وہ اتنے آرام سے تبدیلی نہیں آنے دیں گے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں دوسری مرتبہ ہماری حکومت آنے کی بنیادی وجہ ہیلتھ کارڈ تھے اور جب میں نے وزیر صحت پنجاب یاسمین راشدہ کو صوبے میں ہیلتھ کارڈ دینے کی بات کی تو وہ گھبرا گئیں۔انہوں نے کہا اب خیبرپختونخوا نے ہر شہر کو ہیلتھ کارڈ دینے کا فیصلہ کیا ہے جو ترقی پذیر ملک کے لیے بہت بڑی بات ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.