نوازشریف کی آواز اب بس ٹی وی سکرینوں پر ہی نہیں بلکہ ۔۔۔ (ن)لیگ کیا بڑا کرنے والی ہے ؟ مریم نواز نے عمران اینڈ کمپنی کے لیے خطرے کی گھنٹی بجا دی

لاہور(ویب ڈیسک) مسلم لیگ ن کی مرکزی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف کی آواز تو بند کردی لیکن اب نواز شریف کی آواز ٹی وی پر دکھانے کی ضرورت بھی نہیں ہے،نواز شریف کا مقدمہ گلی محلوں تک پہنچ چکا اب نواز شریف کی آواز نہیں رکے گی ۔

نواز شریف ووٹ کو عزت دو کی بات کرتے ہیں تو ان پر غداری کے مقدمے ہوتے ہیں ،یہ کیسا غدار ہے جس نے بھارت کے پانچ ایٹمی دھماکوں کے مقابلے میں چھ ایٹمی دھماکے کر کے پاکستان کو نا قابل تسخیر بنا یا ،یہ کیسا غدار ہے جس نے جے ایف تھنڈرجنگی جہاز بنا یا ،یہ کیسا غدار ہے جس نے موٹر وے بنائی جہاں جنگی جہاز بھی اڑ سکتے ہیں ،یہ کیسا غدار ہے جس نے دہشت گردی ختم کی ،جس نے ضرب عضب اور رد الفساد کیا ،کہا جاتا ہے کہ اس کے پیچھے فوج ہے ،جی بالکل اس کے پیچھے فوج ہے لیکن آگے نواز شریف کھڑا تھا ۔مریم نواز نے کہا کہ یہ کیسا غدار ہے جو فوج کو یہ نہیں کہتا کہ ہم جنگیں لڑ رہے ہیں آپ کی تنخواہوں میں اضافہ نہیں کر سکتے ،جس نے اپنی حکومت کا پیٹ کاٹ کر پیسے دئیے او ر جنگ لڑی۔نواز شریف نے بھارت کے پانچ ایٹمی دھماکوں کے جواب میں چھ ایٹمی دھماکے کیے۔ ن لیگ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئےانہوں نے کہا کہ آپ سب نے وفا کی تاریخ رقم کی ہے، ہم دھاندلی کے خلاف کھڑے رہے ہیں، پاکستان کی ہر بیماری کا علاج ووٹ کو عزت دو کے نعرے میں چھپا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب ووٹ کو عزت نہیں ملتی تو پھر جس کو لا کر ہمارے سروں پر مسلط کیا جاتا ہے ،اس میں قابلیت نہیں دیکھی جاتی تابعداری دیکھی جاتی ہے ۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف نے پارٹی کے تمام ارکان قومی اسمبلی، صوبائی اسمبلی،سینیٹرز اور ٹکٹ ہولڈرز کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آپ میں سے کئی ایسے بھی ہیں جو بہت دیر سے سیاست کے میدان میں ہیں اور پاکستان کے عوام کی خدمت کا فریضہ اٹھایا ہواہے ، آپ کے کندھوں پر ذمہ داری ہے ، آپ بھی تو سوچتے ہوں گے کہ پاکستان کے اندر کیا ہوتاہے کہ کبھی یہاں پر ایک نظام ہوتاہے اور پھر اسے ختم کر کے دوسرا نظام آجاتاہے ، اس کے بعد تیسرا آجاتاہے ، یہ پاکستان کا آئین ہے جس کو آپ کئی مرتبہ پڑھ چکے ہوں گے ،میں بھی پڑھ چکا ہوں ، اس آئین کے مطابق نا پارلیمنٹ کو چلنے دیا جاتاہے اور نہ ہی عدلیہ کو چلنے دیا جاتاہے اور نہ پاکستان کے کئی دوسرے اداروں کو چلنے دیا جاتاہے ، ایسی طاقتیں جو اس پر مکمل طور پر حاوی ہو جاتی ہیں، زیادہ دور نہ جائیں 2017 میں یہ پاکستان کی خدمت کا ہم اپنا فریضہ انجام دے رہے تھے ،میں ہی اس فریضے کی سربراہی کر رہا تھا ۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *