پہلے ہی جلسے میں اختلاف ۔۔۔ حکومت مخالف اپوزیشن کا کوئٹہ کا جلسہ منسوخ ، اب کہاں ہو گاا ور وجہ کیا بنی؟ حیرت کے جھٹکے کے لیے تیار ہو جائیں

اسلام آباد(ویب ڈیسک) مسلم لیگ (ن) کے سیکریٹری جنرل احسن اقبال نے حکومت کے خلاف اپوزیش اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی اسٹیرنگ کمیٹی کے اجلاس سے متعلق بتایا ہے کہ پی ڈی ایم کا جلسہ 18 اکتوبر کو کراچی میں ہوگا۔اسلام آباد میں دیگر سیاسی رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس

کے دوران احسن اقبال نے کہا کہ سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کو پی ڈی ایم کا سیکریٹری جنرل بنایا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ تمام جماعتوں نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا ہے کہ 25 اکتوبر کو کوئٹہ میں عظیم الشان جلسہ ہوگا۔رہنما مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ پی ڈی ایم کا 22 نومبر کو پشاور اور 13 دسمبر کو لاہور میں سب سے بڑا جلسہ ہوگا۔احسن اقبال نے کہا کہ جلسوں میں پاکستان کے عوام اپنا فیصلہ سنادے دیں گے کہ وہ ملک میں آئین کی بالا دستی اور آزاد عدلیہ چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم کی اسٹیرنگ کمیٹی کے اجلاس میں مسلم لیگ (ن) کی قیادت اور دیگر سیاسی رہنماؤں کے خلاف مقدمے کی پر زور مذمت کی گئی۔جنرل سیکریٹری مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ کمیٹی میں آزاد کشمیر کے وزیراعظم کے خلاف بغاوت کا مقدمہ بنا جس انداز میں کشمیر کے کاذ کو نقصان پہچانے کی کوشش کی گئی ہے اس کی اجلاس نے پرزور مذمت کی ہے۔اس موقع پر پی ڈی ایم کے نو منتخب سیکریٹری جنرل شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ہمارا مقصد صرف پاکستان کی عوام کو ریلف دینا ہے، موجودہ حکومت پاکستان کے مسائل حل نہیں کرسکی۔انہوں نے کہا کہ ہمارا عزم ہے کہ پاکستان کے عوام کو ریلف دیں گے اور دو نکاتی بیاینہ کہ ملک آئین کے مطابق چلے اور جو امانت عوام دیتے ہیں اس میں خیانت نہ کی جائے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ یہ تحریک جب آگے بڑھے گئی تو عوام کا سیلاب اس تحریک کے ساتھ ہوگا اور پاکستان میں جمہوریت کی ایک نئی ابتداء دیکھیں گے۔

پی ڈی ایم کے سینئر نائب صدر مقرر ہونے والے پیپلز پارٹی کے رہنما راجہ پروز اشرف نے کہا کہ عوام رابطہ مہم کے لیے بھی ایک پروگرام تشکیل دیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم کا بنیادی مقصد پاکستان کے عوام کے جذبات کی ترجمانی کرنا ہے۔راجہ پرویز اشرف نے کہا کہ عوام مہنگائی کے باعث ابتر صورتحال میں ہے اور اگر آج ان کے مسائل کے حل کے لیے نہیں نکلے تو سیاسی بددیانتی ہوگی۔رہنما پیپلز پارٹی نے کہا کہ پی ڈی ایم کے سیکریٹری اطلاعات میاں افتخار ہوں گے جس کا تعلق عوامی نیشنل پارٹی کے ساتھ ہے۔یاد رہے کہ 20 ستمبر کو اپوزیشن جماعتوں کی آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ تشکیل دینے کا اعلان کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کیا گیا تھا اور حکومت کے خلاف ملک گیر احتجاجی تحریک چلانے اعلان بھی کیا گیا تھا۔پاکستان پیپلزپارٹی (پی پی پی) کی میزبانی میں منعقدہ آل پارٹیز کانفرنس کا اعلامیہ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے پڑھ کر سنایا اور حکومت کے خلاف بھرپور عوامی تحریک چلانے کا اعلان کیا تھا۔انہوں نے کہا تھا کہ آئین پر یقین رکھنے والی اپوزیشن کی جماعتوں نے اے پی سی میں شرکت کی اور تحریک کو ‘پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ’ کا نام دیا گیا ہے۔آل پارٹیز کانفرنس میں علاج کے غرص سے لندن میں موجود مسلم لیگ (ن) کے قائد اور سابق وزیراعظم نواز شریف نے بذریعہ ویڈیو لنک خطاب کیا تھا اور سابق صدر آصف علی زرداری نے بھی ویڈیو لنک پر خطاب کیا تھا۔بعدازاں کانفرنس کا مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا جس میں وزیر اعظم عمران خان کے استعفے کا مطالبہ کرتے ہوئے ملک گیر احتجاج کا اعلان کیا گیا تھا۔اپوزیشن اتحاد نے ایکشن پلان کے ساتھ ساتھ 26 نکاتی مطالبات بھی پیش کردیے تھے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *